6ٹاﺅن ڈینگی وائرس کی آماجگاہ گلبرگ کے اہم مقامات سے لاوا برآمد

6ٹاﺅن ڈینگی وائرس کی آماجگاہ گلبرگ کے اہم مقامات سے لاوا برآمد

لاہور( جاوید اقبال)صوبائی دارالحکومت کے 6ٹاﺅنوں کی حدود کے 80فیصد علاقے ڈینگی وائرس کی آماجگاہ بن گئے ہیں۔ سب سے زیادہ ڈینگی وائرس کی تصدیق گلبرگ ٹاﺅن کے علاقوں میں ہوئی ہے۔ یہاں تک کے ایم ایم عالم روڈ ، لبرٹی، گلبرگ، علامہ اقبال روڈ جیسے تجارتی مراکز میں بھی ڈینگی وائرس کے انڈے ملے ہیں جس کی بنیادی وجہ یہ بتائی گئی ہے کہ مذکورہ ٹاﺅنوں میں فراہم کئے گئے ڈینگی ورکروں اور مچھروں کے خاتمے کے لئے عملے کو ان کے حقیقی کاموں پر لگانے کی بجائے افسروں کے ذاتی ملازم کے طور پر کام کرایا گیا۔ گلبرگ ٹاﺅن میں ٹی ایم او سمیت دیگر عملہ کی نااہلی اور کام چوری سے گلبرگ کے 80فیصد سے زائد علاقوں میں ڈینگی وائرس کا لاروا پایا گیاہے۔ جس کی وجہ سے اس سال گلبرگ ٹاﺅن ڈینگی کے حوالے سے انتہائی ہائی رسک پر ہے ۔ بتایا گیا ہے کہ اس ٹاﺅن میں ایک مرتبہ بھی ڈینگی مچھروں اور ان کے لاروا کے خاتمہ کے لئے سپرے نہیں کیا گیا، ٹی ایم او فیصل، شہزاد خانہ پوری کرتے رہے۔ بتایا گیا ہے کہ اس ٹاﺅن میں گریڈ 19 کی پوسٹ پر کئی سال تک گریڈ 17 میں ہوتے ہوئے مزے لینے والے فیصل شہزاد ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ کے چہیتے ہیں اور دوسرے سمن آباد ٹاﺅن کے سابق ناظم میاں جاوید علی کی سفارشوں پر مزے اڑاتے رہے اور ٹاﺅن کے عوام کو ڈینگی وائرس کے حوالے کرنے کا انہوں نے عملی طور پر کام کیا دوسرے نمبر پر عزیز بھٹی ٹاﺅن میں جہاں78فیصد آبادی میں ڈینگی وائرس کا لاروا پایا گیا ہے جسکی تصدیق ہوچکی ہے یہ ٹی ایم او اور جونیئر ٹی او آر کی نا اہلیوں کا تحفہ ہے۔ اس طرح سمن آباد ٹاﺅن، نشتر ٹاﺅن، اقبال ٹاﺅن اور راوی ٹاﺅن میں بھی 80فیصد آبادی ٹائروں کی دوکانوں، خفیہ گوداموں میں ڈینگی وائرس کی موجودگی پائی گئی ہے۔ شالا مار ٹاﺅن میں بھی ڈینگی وائرس کے لاروے کی موجوگی بیسوں مقامات پر پائی گئی ہے جو کہ انتظامیہ کی نااہلی کا نتیجہ ہے۔ کسی ایک ٹاﺅن نے بھی شیڈول کے مطابق نہ لاروے کے خاتمے کی مہم چلائی ہے نہ سپرے کیا ہے۔ جس کا نتیجہ یہ ہے کہ آج مذکورہ ٹاﺅنوں میں جگہ جگہ سے جان لیوا ثابت ہونے والے ڈینگی مچھروں کے انڈوں کی موجودگی کی تصدیق ہورہی ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1