اسامہ کے زیراستعمال اراضی خیبرپختونخوا حکومت کے نام منتقل کردی گئی

اسامہ کے زیراستعمال اراضی خیبرپختونخوا حکومت کے نام منتقل کردی گئی

اےبٹ آباد (ثناءنیوز )ایبٹ آباد میں اسامہ بن لادن کے زیراستعمال اراضی خیبرپختونخوا حکومت کے نام منتقل کردی گئی ۔ اس مقام پر اسکول،اسپتال،سرکاری عمارت یاکھیل کا میدان تعمیر ہوگا،فیصلہ نہ ہوسکا ۔ ایبٹ آباد آپریشن کے بعد اسامہ بن لادن کا کمپانڈ بنا دنیا کی توجہ کا مرکز۔ پہلے امریکی مرینز نے آپریشن کے دوران دنیا کے مطلوب ترین شخص کی لاش، ضروری دستاویزات اور اشیا قبضے میں لیں۔ بعدمیں حکومت پاکستان نے کمپاﺅنڈ کھنگال ڈالا۔ اس پرہی بس نہیں القاعدہ رہنماکی رہائش گاہ کو بھی مٹادیاگیا اور اب اس چھ کینال تیرہ مرلہ اراضی کو کردیا گیا ہے حکومت خیبرپختونخوا کے نام۔ جس کا نوٹیفیکیشن بھی جاری کردیاگیا۔جولائی کے وسط میں خیبرپختونخوا حکومت نے ایک اشتہار جاری کیا تھاکہ جس میں کہا گیا تھا اراضی کے دعویدار پندرہ دن میں ڈی آراو کے دفتر سے رابطہ کریں ۔ بصورت دیگر اراضی صوبائی حکومت کے نام منتقل کردی جائے گی۔ ٹھنڈاچوا اور بلال ٹان کے درمیان واقع اراضی محمد ارشد کے نام تھی۔ تنگی، چارسدہ کے رہائشی محمد ارشد کے بارے میں کہا جاتاہے کہ وہ ایبٹ آباد آپریشن میں ہلاک ہوا۔ جس کے بعد اس اراضی کا کوئی دعویدار سامنے نہیں آیا۔ ٹھنڈاچوا اور بلال ٹان کی بارہ سونفوس پرمشتمل آبادی کیلئے کوئی ہسپتال اور سکول موجود نہیں۔ منتقل کی گئی اراضی پر سکول تعمیر ہوتا ہے یا کوئی ہسپتال، سرکاری عمارت بنتی ہے یا اسے بنایا جائے گاکھیل کامیدان، اس بات کا فیصلہ نہیں کیا گیا۔

مزید : صفحہ آخر