اقتصادی بدحالی میں خودکشی کے واقعات میں15فیصد تک اضافہ ممکن

اقتصادی بدحالی میں خودکشی کے واقعات میں15فیصد تک اضافہ ممکن

پیرس (اے پی پی) جدید تحقیق کے مطابق اقتصادی بدحالی اور بے روزگاری کے دور میں لوگوں میں خودکشی کے واقعات میں 8سے 15فیصد تک اضافہ ہوسکتا ہے۔ گذشتہ روز فرانس کے مشہور طبی جریدے ” بی ایم جے “ میں شائع ہونے والی آسٹریلین نیشنل یونیورسٹی اوردیگراداروں کی مشترکہ تحقیقی رپورٹ کے مطابق یورپی ممالک سمیت دنیا بھر میں مشکل مالی حالات کے دوران اور آسٹریلیا جیسے علاقوںمیں قحط سالی کے باعث لوگوں میں خودکشی کے واقعات بڑھ جاتے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق برطانیہ میں 2007ءکی اقتصادی بدحالی سے قبل خودکشی کے 4006 واقعات ریکارڈ کئے گئے مگر اقتصادی بدحالی کے دوران 2008ءمیں یہ تعداد بڑھ کر4 ہزار292، 2009ءمیں 4 ہزار388 جبکہ حالات بہتر ہونے پر2010ءمیں کم ہوکر4ہزار206 پر واپس آگئی تاہم 2008ءسے 2010ءکے دوران فقط مالی مشکلات یا بے روز گاری کے باعث خودکشیاں کرنے والوں کی تعداد صرف ایک ہزار رہی جن میں سے 846 مرد جبکہ 154 خواتین تھیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ آسٹریلیا میں خشک سالی کے باعث بیماریاں بڑھ جاتی ہیں ۔ کم پیداوار کے باعث کسان اپنی مشکلات سے بچنے کےلئے خودکشیوں کا سہارا لیتے ہیں۔

مزید : عالمی منظر