15پر کال کرکے پولیس کو امداد کیلئے بلانے والا 2بھائیوں سمیت حوالات بند

15پر کال کرکے پولیس کو امداد کیلئے بلانے والا 2بھائیوں سمیت حوالات بند

لاہور(کرائم رپورٹر) غازی آباد میں ایک شریف شہری کو پولیس امداد کے لئے ایمرجنسی 15 اور ہیلپ لائن 8330 پر کال کرنے پر سب انسپکٹر امجد خاں نے الٹا دو بھائیوں سمیت حوالات میں بند کر دیا۔ شہری ڈاکٹر منیر کو دو بھائیوں محمد شکیل اور شبیر احمد سمیت رات بھر تھانے میں بند رکھا۔ ڈاکٹر منیر کے مطابق وہ اپنی بیوی بچوں کے ہمراہ گاڑی پر سوار ہو کر گھر واپس آ رہا تھا کہ راستے میں چند مشکوک افراد نے اس کا پیچھا کیا، وجہ پوچھنے پر آوارہ افراد مشتعل ہو گئے۔ ڈنڈوں سے مسلح ہو کر پہلے کلینک پر ہلہ بول دیا بعد میں ڈاکٹر منیر کے مطابق اس کے گھر پر آ گئے۔ خواتین سے بدتمیزی کی اور جان سے ماردینے کے لئے گھرمیں داخل ہو گئے۔ ڈاکٹر منیر کے مطابق اس نے اپنی جان کی حفاظت کے لئے پولیس ایمرجنسی نمبر15 پر کال کی اور پولیس کے ہیلپ لائن نمبر8330 پر میسج کیا۔ موقع پر سب انسپکٹر امجد خاں آیا۔ وقوعہ کا ملاحظہ کرنے کے بعد تین ملزمان ارسلا وغیرہ کو گرفتار کر کے تھانے لے گئے، ساتھ ہی ملزمان سے مبینہ طور پر مک مکا کر کے ڈاکٹر منیر کو بھی مقدمہ درج کرنے کے بہانے تھانے بلا لیا اور وہ اپنے چھوٹے بھائیوں محمد شکیل اور شبیر احمد کے ہمراہ تھانے گیا تو سب انسپکٹر امجد خاں نے ایس ایچ او عتیق ڈوگر کے کہنے پر ڈاکٹر منیر کو بھی بھائیوں سمیت حوالات میں بند کر دیا۔ آخری اطلاع تک ڈاکٹر منیر کو بھائیوں سمیت حوالات میں بند رکھاگیا ڈاکٹر منیر کے والد حبیب احمد کے مطابق پولیس نے الٹا اس کے بیٹوں کو ہی حوالات میں بند کر دیا اور انسدادی کارروائی کی جا رہی ہے۔ بزرگ شہری حبیب احمد نے وزیر اعلیٰ پنجاب، آئی جی پولیس، سی سی پی او اور ڈی آئی جی آپریشن سے اپیل کی ہے کہ سب انسپکٹر اور ایس ایچ او عتیق ڈوگر کے خلاف اختیارات سے تجاوز اور انصاف کی بجائے حوالات میں بند کرنے پر کارروائی کی جائے۔ شہری کے مطابق ایس پی کینٹ کو بھی صورتحال سے آگاہ کیا گیا ہے تاحال کسی قسم کی کوئی مدد نہیں کی گئی ہے۔ رات گئے سب انسپکٹر امجد خاں سے رابطہ کیا گیا تو اس نے بتایا کہ ایس ایچ او کے حکم پر دونوں پارٹیوں کو حوالات میں بند کیا گیا ہے۔ صبح ایس ایچ او تھانے آئیں گے تو معاملہ خود دیکھیں گے۔ جبکہ ایس پی کینٹ کے مطابق کسی قسم کی زیادتی سامنے آئی تو کارروائی کی جائے گی۔

مزید : علاقائی


loading...