عدالتیں کرپشن کرنے والوں کو حکم امتناعی دیتی ہیں ،ایک کیس کے تین فیصلے ہوتے ہیں :خورشید شاہ

عدالتیں کرپشن کرنے والوں کو حکم امتناعی دیتی ہیں ،ایک کیس کے تین فیصلے ہوتے ...

اسلام آباد(اے این این)پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین اور قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ نے مختلف اداروں میں اشتہارات کے بغیر بھرتیوں کی رپورٹ طلب کرتے ہوئے کہا ہے کہ لوگ اربوں روپے کا فراڈ کرکے چلے جاتے ہیں لیکن کوئی پوچھنے والا نہیں ہوتا۔پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں چیئرمین سید خورشید شاہ کی زیر صدارت پبلک اکانٹس کمیٹی کا اجلاس ہوا۔ اجلاس کے دوران خورشید شاہ نے حکومت پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس ملک میں اربوں روپے کا فراڈ ہو رہا ہے اور ہم خاموش نہیں رہ سکتے، ملک کے مختلف اداروں میں ٹینڈر اور اشتہار کے بغیر بھرتیاں ہورہی ہیں، اس سے بڑھ کر اور کیا ناانصافی ہوگی قانون صرف غریبوں کے لئے ہے، یہاں انصاف صرف ایک شخص کے لیے نہیں ہونا چاہیے۔ان کا کہنا تھا کہ لوگ اربوں روپے کا فراڈ کر کے چلے جاتے ہیں کوئی پوچھنے والا نہیں،اسلام آباد کا گرینڈ حیات ہوٹل کا اسکینڈل سب کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے پھر نعرے لگاتے ہیں ہم بہت پاک، صاف اور اچھے ہیں۔ عدالتیں بھی کرپشن اوراربوں کا فراڈ کرنے والوں کو حکم امتناع دے دیتی ہیں اور ایک مقدمے کے 3،3 فیصلے کرتی ہیں۔ انہیں توہین عدالت کا ڈر نہیں کیونکہ وہ پارلیمنٹ میں بات کررہے ہیں۔پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے مختلف اداروں میں گریڈ ون، ایم ون اور ایم ٹومیں بھرتیوں کی رپورٹ مانگ لی اور کہا حکومت بتائے ان عہدوں پر کسے اور کیسے بھرتی کیاگیا

مزید : صفحہ اول


loading...