خیبر پختونخوا پولیس کا داخلہ و قبائلی امور کو پولیس آرڈیننس پر وسیع تر مفاد کیلئے عملدرآمد کا مراسلہ

خیبر پختونخوا پولیس کا داخلہ و قبائلی امور کو پولیس آرڈیننس پر وسیع تر مفاد ...

 پشاور( کرائمز رپورٹر )محکمہ پولیس خیبر پختونخوا نے صوبائی محکمہ داخلہ و قبائیلی اُمور کو پولیس آرڈیننس 2016 پر عوام کے وسیع تر مفاد میں اسکی اصلی روح کے مطابق فوری عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لئے ایک مراسلہ ارسال کر دیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق سنٹرل پولیس آفس پشاور سے صوبائی محکمہ داخلہ و قبائلی اُمور کو جاری ہونے والے مراسلے میں لکھا گیا ہے کہ خیبر پختونخوا پولیس آرڈیننس 2016 ؁ کا نفاذ ہو کر یکم اگست 2016 ؁ کا اسکا باقاعد ہ نوٹیفیکیشن بھی جاری ، یہ چونکہ نہایت اہمیت کا حامل آرڈیننس ہے اسلئے عوام کے وسیع تر مفاد میں اس کا فوری نفاذبھی وقت کی اشد ضرورت ہے۔ خط میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ آرڈیننس کا اس کی اصلی روح کے مطابق نفاذ اور آرڈیننس کے تحت مختلف باڈیز(فورم) کی بروقت تشکیل کو یقینی بنانے اور عمل درآمدکے لئے آرڈیننس کے دفعہ 144 کے تحت ایک کمیشن تشکیل دی جائے۔مراسلے میں مزید لکھا گیاہے کہ اگرچہ آرڈیننس کے ذریعے پہلے سے اٹھائے گئے عوامی فلاح کے کئی اقدامات کو ادارہ جاتی شکل دی گئی ہے تاہم ابھی بھی کئی باڈیز کا قیام باقی ہے۔۔ خط میں پبلک سیفٹی کمشن اور ریجنل کمپلنٹ اتھارٹیز کے قیام کے لئے عمل تیز کرنے اور پراونشل پبلک سیفٹی کمشن اور ڈسٹرکٹ پبلک سیفٹی کمشن کے لئے باترتیب زیر دفعہ 47 شق (2)، دفعہ 50 شق(2) اور دفعہ (52) شق (2) کے تحت حزب اقتدار اور حزب اختلاف کے ارکان کا چناؤ شروع کرنے کی درخواست بھی کی گئی ہے۔اسی طرح خط میں آرڈیننس کے زیر دفعہ 56 کے تحت آزاد ممبران کے چناؤ کے لئے سکروٹنی کمیٹیوں کا نوٹیفیکیشن جاری کرنے اور آرڈیننس کے دفعات 62 ،63 اور 64کے تحت کمشنوں کے سیکرٹریٹس اور اُن کے سیکرٹریوں کی تعیناتی کا عمل بھی شروع کرنے کے بارے میں بھی لکھا گیا ہے۔مزید یہ کہ مراسلے میں ریجنل پولیس کمپلنٹ اتھارٹیز کے ممبران کے چناؤ کا عمل آرڈیننس کے زیر دفعہ 66 (3) کے تحت اور متعلقہ ریجنل ھیڈکوارٹرز پر اتھارٹیز کے سیکرٹریٹس کا قیام اور ان کے سیکرٹریوں کی تعیناتی آرڈیننس کے زیر دفعہ 70 کے تحت شروع کرنے کے بارے میں بھی تحریر کیا گیا ہے۔مراسلے کے آخر میں لکھا گیا ہے کہ پولیس آرڈیننس 2016 ؁ حکومت کا ایک بہت بڑا بنیادی انقلابی اقدام ہے اور اس پر اسکی اصل روح کے مطابق فوری عمل درآمد سے نہ صرف عوام کے لئے فائدہ مند اورسود مند ثابت ہوگا بلکہ اس سے پولیس فورس میں پیشہ ورانہ جذبے کو فروغ ملے گااور حکومت کی نیک نامی اور کامیابی کا موجب بھی بنے گا۔ چھٹی میں آرڈیننس کے دفعات پر عمل درآمد کا طریقہ کاروضع کرنے کے لئے سیکرٹری داخلہ و قبائلی اُمور کے زیر قیادت ڈی آئی جی ھیڈ کوارٹرز اور محکمہ قانون کے نمائندوں پر مشتمل کمیٹی کا اجلاس بلانے کی درخواست بھی کی گئی ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول