ہسپتالوں میں قواعد کے برعکس ڈاکٹروں کی بھرتی پر جواب طلب

ہسپتالوں میں قواعد کے برعکس ڈاکٹروں کی بھرتی پر جواب طلب

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے جسٹس قیصررشید اور جسٹس روح الامین پرمشتمل دورکنی بنچ نے خیبر پختونخوا کے ہسپتالوں میں قواعد کے برعکس ڈاکٹروں کی بھرتی کرنے پر سیکرٹری صحت سے سات یوم میں جواب مانگ لیا ہے فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز ڈاکٹرعبدالصمد سمیت متعدد ڈاکٹروں کی جانب سے دائررٹ پرجاری کئے اس موقع پر ان کے وکیل جاوید اقبال گلبیلہ نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گذاروں نے صوبے کے مختلف میڈیکل کالجوں سے ایم بی بی ایس کی ڈگری حاصل کی ہے اور خیبرپختونخوا حکومت نے حال ہی میں مختلف ہسپتالوں کے لئے ایک ہزار سے زائدڈاکٹروں کی بھرتی مشتہرکی جس کیلئے درخواست گذاروں نے بھی درخواستیں دیں اورمطلوبہ کوائف پورے ہونے اورمیرٹ پرپورااترنے کے باوجود انہیں نظرانداز کردیاگیاہے اس طرح ان کامستقبل خطرے میں ہے جبکہ افغانستان سے ایم ڈی کی ڈگری کے حامل امیدواروں کو ان کی جگہ بھرتی کیاگیاہے اسی طرح مقررہ عمرسے زیادہ ڈاکٹروں کی بھی تقرری عمل میں لائی گئی ہے جو کہ غیرقانونی اورغیرآئینی اقدام ہے اورپی ایم ڈی سی رولزکے بھی منافی ہے لہذامذکورہ بھرتیاں کالعدم قرار دے کردرخواست گذاروں کو بھرتی کرنے کے احکامات جاری کئے جائیں فاضل بنچ نے ابتدائی سماعت کے بعد نوٹس جاری کرتے ہوئے سیکرٹری صحت سے سات یوم کے اندر جواب مانگ لیاہے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...