’اب مردوں کو خواتین کی کوئی ضرورت نہیں، ہم نے یہ چیز ایجاد کرلی ہے‘ کمپنی نے ایسا شرمناک اعلان کردیا کہ دنیا میں ہنگامہ برپاہوگیا

’اب مردوں کو خواتین کی کوئی ضرورت نہیں، ہم نے یہ چیز ایجاد کرلی ہے‘ کمپنی نے ...
’اب مردوں کو خواتین کی کوئی ضرورت نہیں، ہم نے یہ چیز ایجاد کرلی ہے‘ کمپنی نے ایسا شرمناک اعلان کردیا کہ دنیا میں ہنگامہ برپاہوگیا

  

سان فرانسسکو (نیوز ڈیسک) جدید سائنس جہاں انسان کی ترقی کے لئے بے حد مفید ثابت ہورہی ہے وہیں شیطان کے پیروکار بھی اسے استعمال کرنے میں ہرگز پیچھے نہیں اور سائنسی ایجادات کے ایسے شرمناک استعمال کررہے ہیں کہ یہ ایجادات کرنے والے بھی شرمندہ ہوجائیں۔ جدید سائنس کے شرمناک استعمال میں حیرت انگیز مہارت رکھنے والے ایک ایسے ہی شخص ریئل ڈولز کمپنی کے سی ای او میک ملن ہیں جو ایسی جنسی گڑیا متعارف کروانے والے ہیں کہ، ان کے دعوے کے مطابق، اس کے بعد مردوں کو خواتین کی کوئی ضرورت ہی نہ رہے گی ۔

مزیدپڑھیں:باڈی بلڈنگ کی شوقین نوجوان لڑکی کو انٹرنیٹ پر اپنی تصویر ایک ایسی جگہ نظر آگئی کہ زندگی کا سب سے بڑا جھٹکا لگ گیا اور پھر۔۔۔

میک ملن کا کہنا ہے کہ وہ یہ کام مصنوعی ذہانت کی جدید ترین ٹیکنالوجی کے استعمال سے ممکن بنائیں گے۔ میک ملن کے کمپنی اے آئی ٹیکنالوجی اور ورچوئل رئیلٹی ٹیکنالوجی کے امتزاج سے ایک ایسی جنسی گڑیا تیار کررہی ہے کہ جو گوشت پوست سے بنی حقیقی عورت جیسی نظر آئے گی اور اپنی مصنوعی ذہانت کے باعث جسمانی ردعمل اور جذبات کا اظہار بھی کرے گی۔

میک ملن کا کہنا ہے کہ مصنوعی ذہانت کی مدد سے اس گڑیا کو ایسی صلاحیت دینے کی کوشش کی جائے گی کہ اس سے لطف اندوز ہونے والا یہ نا بتا سکے کہ اس کے ساتھ حقیقی انسان ہے یا مصنوعی گڑیا۔ ان کا یہ دعوٰی بھی ہے کہ یہ ایجاد جنسی کھلونوں کی تاریخ کو بالکل بدل کر رکھ دے گی۔ انہوں نے ویب سائٹ ریڈ ٹ پر انٹرنیٹ صارفین کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ان کا مقابلہ حقیقی خواتین سے ہے کیونکہ وہ اپنی جنسی گڑیا کو ہوبہو حقیقی خواتین جیسا بنانا چاہتے ہیں۔

واضح رہے کہ رئیل ڈولز کمپنی دنیا کی مقبول ترین اور مہنگی ترین جنسی گڑیائیں بنانے کی شہرت رکھتی ہے۔ اس کمپنی کی بنائی گڑیا 4 سے6 ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 6 سے 10 لاکھ پاکستانی روپے)میں فروخت ہوتی ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس