ضلعی عدالتوں کی طرح ایکس کیڈر کورٹس کی نگرانی کرکے نظام عدل کا مقصد پوراکریں گے،چیف جسٹس منصور علی شاہ

ضلعی عدالتوں کی طرح ایکس کیڈر کورٹس کی نگرانی کرکے نظام عدل کا مقصد پوراکریں ...
ضلعی عدالتوں کی طرح ایکس کیڈر کورٹس کی نگرانی کرکے نظام عدل کا مقصد پوراکریں گے،چیف جسٹس منصور علی شاہ

  


لاہور(نامہ نگار خصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سید منصور علی شاہ نے کہا ہے کہ ایکس کیڈر اور خصوصی عدالتیں بھی ضلعی عدالتوں کے مساوی اہمیت کی حامل ہیں، ماضی میں ان عدالتوں کے درپیش مسائل کے حل کیلئے کوئی اقدامات نہیں کئے گئے جبکہ فراہمی انصاف کے نظام میں ایکس کیڈر و خصوصی عدالتوں کا اہم کردار ہے۔ ان خیالا ت کا اظہار چیف جسٹس نے خصوصی و ایکس کیڈر عدالتوں کے ججز سے ملاقات کے موقع پر کیا۔ مسٹر جسٹس عبد السمیع خان اور مسٹرجسٹس شمس محمود مرزا بھی اجلاس میں شریک تھے۔ چیف جسٹس سید منصور علی شاہ نے کہا کہ ایکس کیڈر و خصوصی عدالتیں جیسا کہ انسداد دہشت گردی عدالتیں، احتساب عدالتیں، سروس ٹریبونلز، اینٹی کرپشن کورٹس، لیبر کورٹس، بنکنگ کورٹس، کنزیومر کورٹس سمیت دیگر خصوصی عدالتوں کو مرکزی دھارے میں شامل کیا جارہا ہے اور عدالت عالیہ ضلعی عدالتوں کی طرح ان عدالتوں کی بھی نگرانی کرے گی۔ چیف جسٹس نے شرکائکو بتایا کہ خصوصی عدالتوں پر توجہ مرکوز نہ کرنے سے نظام انصاف کا مقصد پورا نہیں ہورہا جس سے عام آدمی کو مشکلات کا سامنا ہے۔ فاضل چیف جسٹس نے کہا کہ خصوصی عدالتوں کے مسائل کے حل کیلئے ایک پلیٹ فارم بنایا گیا ہے جس سے عدالت عالیہ اور خصوصی عدالتوںکے درمیان بہترین روابط بنائے جا سکیں گے۔ اس موقع پر شرکائنے فاضل چیف جسٹس کو ایکس کیڈر کورٹس کے مسائل سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ عدالتوں کو انفراسٹرکچر، سٹاف، سیکیورٹی اور ٹرانسپورٹ سمیت دیگر مسائل کا سامنا ہے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ایکس کیڈر کورٹس سے سینئر ججز اور حکومتی نمائندوں پر مشتمل کونسل بنائی گئی ہے جس کے ماہانہ بنیادوں پر اجلاس منعقد ہوں گے۔ فاضل چیف جسٹس نے کہا کہ آئندہ اجلاس میں کیس مینجمنٹ پلان، خصوصی عدالتوں کو سہولیات کی فراہمی اور فاسٹ ٹریک اپائنٹمنٹ سسٹم پر مشتمل ایجنڈا زیر بحث لایا جائے گا۔ اجلاس میں جج احتساب عدالت نمبر تین لاہور، ممبر پنجاب سروس ٹریبونل لاہور، جج اینٹی کرپشن کورٹ لاہور، جج کسٹم و ٹیکس کورٹ لاہور، جج بنکنگ کورٹ، لاہور، جج لیبر کورٹ لاہور، جج لائیو سٹاک ٹریبونل، جج کنزیومر کورٹ، لاہور سمیت دیگر خصوصی عدالتوں کے ججز، صوبائی اور وفاقی افسران شریک تھے۔

مزید : لاہور


loading...