ریاست مدینہ دعویداروں نے  ملک کو کوفہ بنا دیا ہے،نفیسہ شاہ

 ریاست مدینہ دعویداروں نے  ملک کو کوفہ بنا دیا ہے،نفیسہ شاہ

  

حیدرآباد(آن لائن)  پاکستان پیپلزپارٹی کے پارلیمنٹرین کی مرکزی سیکریٹری اطلاعات و رکن قومی اسمبلی نفیسہ شاہ نے کہا ہے کہ ریاست مدینہ کی بات کرنے والوں نے اسے ریاست کوفہ میں تبدیل کردیا ہے۔ حکومت کو ایک سال مکمل کرنے پر ناکامی ہی ملی ہے۔ سیاسی انتقامی کارروائیوں کا سلسلہ بند ہوناچاہئے۔ وہ سابقہ صوبائی وزیر علی نواز شاہ رضوی کی رہائش گاہ پر پریس کانفرنس سے خطاب کررہی تھیں، اس موقع پر پیپلزپارٹی کی سینیٹر سسی پلیجو اور سینیٹر عاجز دھامراہ بھی ان کے ہمراہ موجود تھے۔انہوں نے کہاکہ موجودہ حکومت نے بڑی دھوم دھام سے 100 روزہ پروگرام کا اعلان کیا تھا، ایک کروڑ ملازمتیں اور گھر دینے کے دعوی کا کچھ نہیں ہوا، اب پھر اگلے ایک سال میں ترقی کرنے کا لولی پاپ دیا گیا ہے، انہوں نے کہاکہ کشمیر کے مسئلے پر سفارتی سطح پر پاکستان کو جذباتی انداز اپنا نا ہوگا، توقع تھی کہ کشمیر کے حوالے سے جوائنٹ سیشن کیلئے حکومت کی تیاری ہوگی  لیکن کشمیر کے معاملے پر جوائنٹ سیشن میں وزیراعظم اپوزیشن کے احتجاج کے باوجود 6گھنٹے تاخیر سے پہنچے، ہمیں حکومت کی تیاری نامکمل لگی اور کشمیر کے حوالے سے حکومتی سنجیدگی نظر نہیں آتی، انہوں نے کہاکہ پیپلزپارٹی کبھی بھی جیلوں سے نہیں گھبراتی، ریفرنسز کے ثابت نہ ہونے کے باوجود بھی پیپلزپارٹی کے رہنماؤں نے جیلیں کاٹیں، انہوں نے کہاکہ ایک سال کے دوران حکومت نے اب تک اسمبلی میں کوئی قانون پاس نہیں کیا، اسپیکر اجلاس بلاتے ہیں مگر پھر منسوخ کردیتے ہیں،وزیراعظم کے یوٹرن کا قصہ پرانا ہے وہ اپنے وعدوں وعوؤں پر بھی یوٹرن لیتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پیٹرول کی قیمتیں عالمی منڈی میں کم ہوئی ہیں مگر ہمارے یہاں ان میں اضافہ کیا گیا ہے، گیس کی قیمت میں 600فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔ ٹیکسوں میں اضافہ ہوا ہے اور بیروزگاری بھی تیزی سے بڑھتی جارہی ہے۔انہوں نے کہاکہ آزاد خارجہ پالیسی کی بنیاد ذوالفقار علی بھٹو نے ڈالی تھی، مسلم لیگ(ن) اور پیپلزپارٹی ماضی میں ایک دوسرے کیخلاف رہے ہیں اور آئندہ بھی رہیں گے، وقت ہمیشہ ایک جیسا نہیں رہتا، آج جمہوریت کیلئے ایک ساتھ ہیں اس وقت جمہوریت میں آمریت کا کا لبادہ اوڑھا ہوا تھا۔سینیٹر سسی پلیجو کا کہنا تھا کہ بھارت نے پوری دنیا میں منہ کی کھائی ہے، یورپی یونین، روس یا دیگر ممالک میں ہمیں زیادہ لابنگ کرنی ہوگی، کشمیر کا معاملہ حساس ہے، انڈیا اس خطے کا تھانیدار بننا چاہتا ہے، انہوں نے کہاکہ وزیراعظم عمران خان امریکا گئے تو اس وقت بھی اپوزیشن کو اعتماد میں نہیں لیا گیا، کشمیر کامسئلہ ایک بار پھر پارلیمنٹ میں زیر بحث آئے گا۔ سینیٹر عاجز دھامراہ نے کوئٹہ میں بم دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ جب کشمیر پر قبضے کی بات ہورہی تھی تو عمران نیازی مودی کی کامیابی کیلئے دعا کررہے تھے۔ مودی کی کامیابی کے بعد مولوی عمران نیازی سو گئے، اگر عمران خان کو معلوم تھا کہ بھارت کشمیر کے حوالے سے کیا آئینی ترمیم کرنے جار ہا ہے تو پھر آپ نے کشمیر کا سودا کیا ہے۔

نفیسہ شاہ

مزید :

پشاورصفحہ آخر -