یہ دو صدیوں کی بات ہے، بہ آسانی نہیں جاتی| ضمیر جعفری |

یہ دو صدیوں کی بات ہے، بہ آسانی نہیں جاتی| ضمیر جعفری |
یہ دو صدیوں کی بات ہے، بہ آسانی نہیں جاتی| ضمیر جعفری |

  

نظر کی عیب جوئی،دل کی ویرانی نہیں جاتی

یہ دو صدیوں کی بات ہے، بہ آسانی نہیں جاتی

مسلمانوں کے سر پر خواہ ٹوپی ہو نہ ہو لیکن

مسلمانوں کے سر سے بوئے سلطانی نہیں جاتی

خداوندا! یہ تیرے سادہ دل بندے کدھر جائیں

کہ یہ پیدا ہوگئے ہیں اور حیرانی نہیں جاتی

جہاں تک کثرتِ اولاد نے پہنچا دیا ہے اس کو

وہاں تک بندہ پرور نسلِ انسانی نہیں جاتی

یہ اچھی فقر    و   استغنا کی صورت ہے معاذاللہ

کہ پوری قوم کی صورت ہی پہچانی نہیں جاتی

مجرد آرٹ کی لمبوتری عورت عجب شے ہے

جو اس کو دیکھ لوں پہروں پشیمانی نہیں جاتی

شاعر:سید ضمیر حسین جعفری

Nazar    Ki   Aib    Jaoi  ,  Dil    Ki   Veeraani     Nahen     Jaati

Ye   Do    Sadiun   Ki    Baat   Ba  Aasaani     Nahen    Jaati

 Musalmaanon   K   Sar   Par   Khah   Topi   Ho Na Ho Lekin

Musalmaanon   K   Sar   Say   Boo-e- Sultaani   Nahen   Jaati

 Khudawandaa!   Yeh     Teray    Saada    Dil    Banday    Kidhar   Jaaen 

Keh   Yeh    Paida    Ho    Gaey   Hen    Aor    Hairaani   Nahen   Jaati

 Jahaan   Tak    Kasrat-e-Aolaad    Nay   Pahuncha   Diya   Hay   Iss   Ko

Wahan   Tak    Banda    Parwar    Nasl-e-Insaani   Nahen   Jaati

 Yeh    Achhi    Faqr-o-Istaghna    Ki   Soorat    Hay    Maaz Allah

Keh    Poori   Qaom    Ki    Soorat    Hi    Pehchaani   Nahen   Jaati

 Mujarrid    Art   Ki   Lambootri    Aurat   Ajab    Shay   Hay

Jo   Uss    Ko   Dekh    Lun    Pehron   Hairaani   Nahen   Jaati

 Poet: Zameer   Jafri

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -مزاحیہ شاعری -