دُور سے آج دیکھتے ہوئے لوگ | راول حسین |

دُور سے آج دیکھتے ہوئے لوگ | راول حسین |
دُور سے آج دیکھتے ہوئے لوگ | راول حسین |

  

دُور سے آج دیکھتے ہوئے لوگ

تھے کبھی مجھ کو چاہتے ہوئے لوگ

سرد لہجوں میں کر رہے ہیں کلام

صحن میں دھوپ سینکتے ہوئے لوگ

رفتہ رفتہ زُباں تک آئیں گے

یہ مِری بات کاٹتے ہوئے لوگ

جانے کیا کیا لگی ہوئی تھی بھیڑ

کھو گئے مجھ کو ڈھونڈتے ہوئے لوگ

دیکھتا ہوں گلی کے مُڑنے تک

بالکونی سے دیکھتے ہوئے لوگ

جانے کب سو گئے اُڑا کر نیند

وہ مِرے ساتھ جاگتے ہوئے لوگ

شاعر:راول حسین

(راول حسین کی بیاض سے)

Door    Say    Aaj    Dekhtay   Huay    Log

Thay   Kabhi    Mujh   Ko    Chaahtay   Huay    Log

Sard    Lehjon    Men    Kar    Rahay    Hen   Kalaam

Sehn    Men    Dhoop    Sainktay    Huay    Log

Rafta    Rafta    Zubaan    Tak   Aaen   Gay

Yeh    Miri    Baat    Kaat,tay    Huay    Log

  

Jaany    Kaya     Kaya    Lagi    Hui    Thi    Bheerr

Kho   Gaey     Mujh    Ko    Dhoondtay    Huay    Log

Dekhta    Hun    Gali    K    Mrrnay   Tak

Baalkoni    Say    Dekhtay    Huay    Log

Titlion    K    Paron    Say    Naazuk    Hen

Baagh    Men     Pholl    Torrtay   Huay    Log

Jaanay    Kab    So    Gaey    Urra    Kar   Neend

Wo    Miray    Saath    Jaagtay   Huay    Log

Poet: Rawal   Hussain

مزید :

شاعری -غمگین شاعری -