جاسوسی پروگرام میں کچھ تبدیلیوں کیلئے جائزہ پینل نے صدراوباما کو سفارشات پیش کردیں

جاسوسی پروگرام میں کچھ تبدیلیوں کیلئے جائزہ پینل نے صدراوباما کو سفارشات ...
جاسوسی پروگرام میں کچھ تبدیلیوں کیلئے جائزہ پینل نے صدراوباما کو سفارشات پیش کردیں

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) شہریوں کی جاسوسی سے متعلق امریکی صدر بارک اوباما کے قائم کردہ جائزہ پینل نے نیشنل سیکیورٹی ایجنسی کے پروگرام میں تبدیلیوں اورکچھ کی بندش کی سفارش کردی۔امریکی میڈیا کے مطابق وائٹ ہاﺅس کے جائزہ پینل نے اپنی حتمی رپورٹ میں کہا ہے کہ این ایس اے کو شہریوں کے فون کالز ریکارڈ کرنے سے گریز کرنا چاہیے،پینل نے حکومت کے نگرانی کے پروگرام میں کچھ تبدیلیوں کی بھی سفارش کی ہے ۔کہاجارہاہے کہ عدالت کو پروگرام کی بندش کے بارے میں بتانے کے لیے ایسے اقدامات ضروری تھا تاہم واضح نہیں کیاکہ پینل نے مکمل طورپر جاسوسی پروگرام ختم کرنے کی سفارش کی یانہیں اور تبدیلیوں سے جاسوسی کے پروگرام پر کتنا اثر پڑے گا۔اپنے ایک بیان میں وائیٹ ہاﺅس نے پینل کی رپورٹ کی تعریف کرتے ہوئے کہاکہ انتظامیہ آئندہ چندہفتوں میں رپورٹ کا جائزہ لے گی ۔بیان کے مطابق صدر اوباما نیشنل سیکیورٹی ایجنسی کی ٹیم کیساتھ رپورٹ کاجائزہ لیں گے اور دیکھاجائے گاکہ کونسی سفارشات پر عمل درآمد ہوسکتاہے ۔یادرہے کہ یہ رپورٹ ایسے وقت پر سامنے آئے ہے جس سے دو روز قبل فیڈرل جج نے قراردیاتھاکہ ٹیلی فون کا ریکارڈ حاصل کرنا بظاہر آئینی کے منافی ہے ۔جائزہ پینل کے ممبر رچرڈ کلارک کا کہنا ہے پینل نے این ایس اے کے میٹا ڈیٹا پروگرام کی افادیت اور اثرانگیزی پر شدید شکوک وشبہات کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ ملکی سلامتی کے قیمت لوگوں کی انفرادی رازداری، شخصی آزادی اور عوامی اعتماد کی قربانی کی صورت میں دی جاسکتی ہے۔

مزید :

انسانی حقوق -اہم خبریں -