امریکا نے افغانستان سے ایک کھرب ڈالر کی کیا چیز نکالنے کا منصوبہ بنا لیا؟ جان کر آپ کو اِس ساری جنگ کی اصل وجہ بالآخر سمجھ آجائے گی

امریکا نے افغانستان سے ایک کھرب ڈالر کی کیا چیز نکالنے کا منصوبہ بنا لیا؟ جان ...
امریکا نے افغانستان سے ایک کھرب ڈالر کی کیا چیز نکالنے کا منصوبہ بنا لیا؟ جان کر آپ کو اِس ساری جنگ کی اصل وجہ بالآخر سمجھ آجائے گی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

امریکا نے افغانستان سے ایک کھرب ڈالر کی کیا چیز نکالنے کا منصوبہ بنا لیا؟ جان کر آپ کو اِس ساری جنگ کی اصل وجہ بالآخر سمجھ آجائے گی

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکا نے ڈیڑھ دہائی سے افغانستان میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کے نام پر قبضہ جما رکھا ہے۔ اگرچہ اس کا ایک مقصد خطے میں اپنی عسکری موجودگی کو یقینی بنانا ہے لیکن درپردہ کیا گیم چل رہی ہے، یہ حیرتناک انکشاف پہلی بار سامنے آیا ہے۔ 

ویب سائٹ ’ہفنگٹن پوسٹ‘ پر شائع ہونے والی ایک خصوصی رپورٹ میں تحقیق کار مائیکل ہیوز نے انکشاف کیا ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ افغانستان سے کم از کم ایک کھرب ڈالر (تقریباً 100 کھرب پاکستانی روپے) کی قیمتی معدنیات نکالنے کے منصوبے کو عملی جامہ پہنانے کی تیاری کر رہے ہیں۔ امریکا کے اس خفیہ منصوبے میں بد نامِ زمانہ سیکیورٹی کمپنی بلیک واٹر کا اسے مکمل تعاون حاصل ہو گا ۔

لائیو ٹی وی دیکھنے کے لئے اس لنک پر کلک کریں
رپورٹ کے مطابق امریکا اپنے اس پراجیکٹ کیلئے ایسٹ انڈیا کمپنی کے ماڈل کو پھر سے زندہ کرنا چاہ رہا ہے۔ یعنی جس طرح دو صدیاں قبل ایسٹ انڈیا کمپنی نے ہندوستان میں دراندازی کر کے اس کے وسائل کو لوٹ کر تاج برطانیہ کے خزانوں میں منتقل کیا اسی طرح امریکا افغانستان کے معدنی وسائل کو لوٹ کر اپنے خزانے بھرنا چاہ رہا ہے۔
آنے والے دنوں میں اس اس پلان کی عملی صورت اس وقت نظر آئے گی جب افغان جنگ کو نیٹو افواج کی بجائے ایک نجی فوج کے سپر د کر دیا جائے گا ۔ بلیک واٹر کے بانی ایرک پرنس یہ پرائیویٹ فوج فراہم کریں گے، جن کی اپنی حیثیت اس نئی سکیم میں وائسرائے جیسی ہو گی جو افغانستان میں لڑنے والی تمام نجی افواج اور امریکی مفادات کے نگران ہونگے۔
امریکا اس منصوبے کے ذریعے نا صرف اپنے فوجیوں کی جانیں بچانا چاہتا ہے بلکہ افغانستان پر قبضہ جاری رکھنے کیلئے پرائیویٹ آرمی کو بھی استعمال کرنا چاہتا ہے ، جو اپنے تمام اخراجات بھی افغانستان کے معدنی وسائل کی لوٹ مار سے پورے کرے گی ۔ اس منصوبے کے تحت نایاب معدنیات جیسا کہ یورینیم ، فاسفیٹ اور ریئر ارتھ میٹلز کو بھی نکالا جائے گا ، جن کی بھاری مقدار ہلمند ، ننگرہار جیسے صوبوں کے پہاڑوں میں موجود ہے۔
رپورٹ کے مطابق بلیک واٹر کے بانی نے امریکی حکومت کو یہ بھی باور کروایا ہے کہ اس منصوبے کے ذریعے نایاب معدنیات کی مارکیٹ پر چین کے غلبے کا توڑ بھی کیا جا سکتا ہے۔ اس وقت نایاب معدنیات کی مارکیٹ کا 90فیصد سے زائد حصہ چین کے پاس ہے، جس پر قبضے کے لئے امریکابے حد بے تاب ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -