پی سی جی اے گروپوں میں پھوٹ‘ قیادت پرالزامات کی بارش

  پی سی جی اے گروپوں میں پھوٹ‘ قیادت پرالزامات کی بارش

  



ملتان ( نیوز رپورٹر)انصاف جنرز گروپ پاکستان کاٹن جنرز ایسوسی ایشن (پی سی جی اے)کے چیئرمین میاں محمود احمد نے الزام عائد کیاہے کہ پی سی جی اے کی موجودہ قیادت غیرقانونی(بقیہ نمبر23صفحہ12پر)

اقدامات میں ملوث ہے۔سپریم کورٹ ڈیم فنڈ کے ایک کروڑ روپے اکاؤنٹ سے غائب ہیں۔کھل پرپانچ فیصد سیلز ٹیکس کے خاتمے میں کوئی پیشرفت نہیں ہے۔ممبران کو طفل تسلیاں دی جارہی ہیں۔غیر جمہوری،غیرقانونی اقدامات اور ڈکٹیٹرشپ،فنڈز کی خوردبرد کے خلاف ڈائریکٹر جنرل ٹریڈ آرگنائزیشن (ڈی جی ٹی او) سے رجوع کررہے ہیں۔سیکرٹری جنرل پی سی جی اے کے اختیارات چھین لئے گئے ہیں۔انصاف گروپ کے وائس چیئرمین ملک طلعت سہیل اورمیاں زاہد اسلام کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے میاں محمود احمد نے کہا کہ تین ماہ گزرنے کے باوجود کھل پر سیلز ٹیکس کے خاتمے کے ایشو پر کوئی پیشرفت نہیں ہوئی ہے۔کوئی مشاورت کوئی لائحہ عمل نہ ہونے سے ایسوسی ایشن غیر فعال ہوکر رہ گئی ہے۔ بے قاعدگیاں اور بے ضابطگیاں عروج پر ہیں۔سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس کے نام پر گروپ میٹنگ بلائی گئی ہے۔یہ تھنک ٹینک نہیں بلکہ”تھینک ٹینک“کی میٹنگ ہے جس کا بائیکاٹ کرتے ہیں۔ ملک طلعت سہیل نے کہا کہ تنقید برائے تنقید کے قائل نہیں ہیں لیکن ایسوسی ایشن کی کاروائی مایوس کن ہے۔تین ماہ میں کھل پر سیلز ٹیکس کے خاتمے کے لئے کوئی سنجیدہ کوشش اور اقدامات نہیں کئے گئے ہیں۔کاٹن سیزن 2019-20ء میں 33 فیصد جیننگ فیکٹریاں بند رہی ہیں جبکہ بقیہ بدحالی و مشکلات کاشکار ہیں۔مارک اپ ریٹس پر خاموشی اختیارکی گئی۔ہر غلط کام پر احتجاج ریکارڈ کرائیں گے۔ملک میں کاٹن کاسٹاک موجود ہونے کے باوجود کاٹن کی ڈیوٹی فری امپورٹ کی اجازت دی جارہی ہے جو کاٹن جیننگ سیکٹرکے لئے تباہ کن ثابت ہوگی۔ایسوسی ایشن کے عہدیداروں کی خاموشی مجرمانہ فعل ہے۔

پھٹ

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...