دو سال میں ملکی وسائل پرانحصار، صرف 26.6ارب ڈالر قرض لیا، وزات اقتصادی امور

  دو سال میں ملکی وسائل پرانحصار، صرف 26.6ارب ڈالر قرض لیا، وزات اقتصادی امور

  

 لاہور(اے پی پی) وفاقی وزارت اقتصادی امور کے ترجمان نے کہا ہے کہ روا ں مالی سال کے پہلے 5ماہ میں غیرملکی قرضوں میں کوئی اضافہ نہیں ہوا۔ جمعہ کو جاری بیان میں کہاگیاکہ موجودہ مالی سال 2020-2021ء کے پہلے 5ماہ (جولائی تا نومبر2020ء) کے دوران صرف ساڑھے 4ارب ڈالر موصول ہوئے ہیں جبکہ رواں مالی سال کے لئے غیرملکی قرضوں کے تخمینے کا کل حجم 14 اعشاریہ 37 ارب ڈالر رکھا گیاتھا۔اسی عرصے کے دوران 2اعشاریہ 9 ارب ڈالر بیرونی قرضوں کی مد میں ادائیگیاں بھی کی گئی ہیں چنانچہ حکومت کو ابھی تک صرف ایک اعشاریہ 6 ارب ڈالر موصول ہوئے ہیں جبکہ رواں مالی سال کے بجٹ تخمینہ کے مطابق حکومت پاکستان کو بیرونی قرضوں کی مد میں 11 اعشاریہ 39 ارب ڈالر ادا کرنا ہوں گے۔ ترجمان نے کہا کہ تصویر کا اصل رخ یہ ہے کہ تحریک انصاف کے کل عرصہ اقتدار (اگست 2018 ء تا نومبر 2020ء) میں بیرونی قرضوں کی مجموعی رقم 26 اعشاریہ 6 ارب ڈالر رہی جبکہ اسی رقم میں سے 23 اعشاریہ 3 ارب ڈالر بیرونی قرضوں کی مد میں ادائیگیاں بھی کی گئیں۔ یوں موجودہ حکومت کے کل عرصہ اقتدار میں مجموعی بیرونی قرضوں کا حجم صرف 3اعشاریہ دو ارب ڈالر بنتا ہے۔ان اعداد وشمار کو مد نظر رکھتے ہوئے اور معاشیات کے اصولوں کے مطابق یہ کہنا کسی طور پر درست نہیں ہے کہ موجودہ حکومت کے دور میں بیرونی قرضوں میں اضافہ ہوا ہے۔ موجودہ حکومت روز اول سے ملکی وسائل پر زیادہ سے زیادہ انحصار کرنے کی پالیسی پر گامزن ہے۔ 

اقتصادی امور

مزید :

صفحہ آخر -