آپریشن کے ذریعے جنس تبدیل نہیں واضح ہوتی ہے،پروفیسر لیاقت

آپریشن کے ذریعے جنس تبدیل نہیں واضح ہوتی ہے،پروفیسر لیاقت

  

لاہور(پ ر)پاکستان کے نامور اینڈ وکرائنالوجسٹ ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر لیاقت علی مرزا نے کہا ہے کہ آپریشن کے ذریعے جنس تبدیل نہیں بلکہ واضح ہوتی ہے کیونکہ بعض بچوں میں جنس واضح نہیں ہوتی جبکہ بعض میں لڑکا اور لڑکی دونوں کے ہی اعضاء ہوتے ہیں ایک ماہر سرجن سرجری کے ذریعے کارآمد عضو کو رکھ کر دوسرے اعضاء کو نکال  دیتا ہے مگر اہم ترین بات یہ ہے کہ کوئی بھی سرجن جنس تبدیل نہیں کرتا بلکہ آپریشن کے ذریعے جنس واضح کرتا ہے جو اللہ تعالیٰ نے پیدائش کے وقت بچے کو دی ہوتی ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔برتھ ڈیفیکٹ فا?نڈیشن کے پیٹرن اوراینڈ وکرائنالوجسٹ ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر لیاقت علی مرزا نے کہا کہ ٹرانسجینڈر (خواجہ سرا) سرجری کے ذریعے جنس تبدیل نہیں کرواسکتے۔

 ہیں کیونکہ خواجہ سرا پیدائش کے وقت سو فیصد نارمل لڑکا یا لڑکی ہوتے ہیں لیکن پھر چار سال کے بعد ان کے دماغ میں پیدا ہونے والے مادہ انہیں جنس مخالف کا رویہ اپنانے پر مجبور کر دیتا ہے اور پھر ایک نارمل لڑکا خود کو لڑکی سمجھنے لگتا ہے جبکہ نارمل لڑکی خود کو لڑکا سمجھ کر زندگی گزارنا شروع کر دیتے ہیں،یہ ایک نفسیاتی بیماری ہے ایسے لوگوں کو سرجری کی بالکل بھی ضرورت نہیں ہوتی ان کا علاج ایک ماہر نفسیات چھے مہینے کے اندر کر سکتا ہے، بارہ سال کی عمر سے قبل اس بیماری کا علاج آسانی کیساتھ ہو جاتا ہے لیکن اس کے بعد مریض کے تعاون کے بغیر علاج ممکن نہیں ہوتا۔ اینڈ وکرائنالوجسٹ ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر لیاقت علی مرزا کا کہنا تھا کہ جنس واضح نہ ہونے والے بچوں کو میڈیکل کی زبان میں انٹرسیکس کہا جاتا ہے یہ خواجہ سرا نہیں ہوتے،ان بچوں کوسب سے بڑا مسئلہ نادرا میں اپنی جنس کی درست شناخت کے اندراج کا درپیش آتاہے لہٰذا برتھ ڈیفیکٹ فا?نڈیشن وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتی ہے کہ جس طرح ٹرانسجینڈر (خواجہ سرا)پر قانون سازی ہوئی اس طرح جنس واضح نہ ہونے والے بچوں کے حوالے سے بھی قانون سازی کی جائے،برتھ ڈیفیکٹ فا?نڈیشن قانون سازی کو عملی جامعہ پہنانے کے حوالے سے حکومت کے ساتھ میڈیکلی اورتکنیکی تعاون کرے گی۔ پاکستان کے نامور اینڈ وکرائنالوجسٹ ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر لیاقت علی مرزا نے کہا کہ الیکٹرونک اور پرنٹ میڈیا کو چاہئے کہ وہ پیدائشی طور جنس واضح نہ ہونے والے بچوں کے حوالے سے عوام میں شعور اور آگاہی پیدا کرنے کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -