سینیٹر آصف کرمانی کی آستانہ عالیہ بساہاں شریف آمد ، مقبوضہ کشمیر اور کنٹرول لائن کی صورتحال پر تبادلہ خیال

  سینیٹر آصف کرمانی کی آستانہ عالیہ بساہاں شریف آمد ، مقبوضہ کشمیر اور ...
  سینیٹر آصف کرمانی کی آستانہ عالیہ بساہاں شریف آمد ، مقبوضہ کشمیر اور کنٹرول لائن کی صورتحال پر تبادلہ خیال

  

اسلام آباد(مجتبیٰ علی شاہ )  سینیٹر آصف کرمانی کی گزشتہ روز آستانہ عالیہ بساہاں شریف آمد ہوئی جہاں ممبر آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی و سجادہ نشیں درگاہ بساہاں شریف پیر سید علی رضا بخاری نے ان کا پرتپاک استقبال کیا،بعدازاں دونوں رہنماؤں میں ملاقات ہوئی جس میں مقبوضہ کشمیر میں  بھارتی مظالم کی تازہ ترین صورتحال ،کرفیو،لاک ڈاؤن اور کنٹرول  لائن پر جاری بھارتی فائرنگ سے پیدا شدہ تازہ صورت حال پربھی تبادلہ خیال کیا گیااور مقبوضہ ریاست  میں  500روز سے جاری فوجی محاصرے کی مذمت کی گئی۔

دونوں رہنماؤں نے ایل او سی پر اقوام متحدہ کی گاڑی پر بھارتی فائرنگ کی بھی مذمت کی اور کہا کہ یہ واقعہ مہذب دنیا کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر آصف کرمانی اور پیر علی رضا نے کہا کہ پانچ اگست  مقبوضہ کشمیر میں سفاک اور المناک دن تھا جس دن بھارت نے  کشمیر کی خصوصی آیئنی حیثیت ختم کی اور ریاست کا فوجی محاصرہ کر کے انسانی حقوق کی دھجیاں بکھیردیں جس کے نتیجے میں انسانی حقوق کا عالمی چارٹر مذاق بن گیا ہے۔

ڈاکٹر کرمانی نے کہا کہ بھارت نے انسانی حقوق کی دھجیاں بکھیر دیں ہیں اور کشمیر لہولہو ہے، بھارت ریاستی دہشت گردی کے ذریعے نوجوان کشمیری نسل کو ختم کرنے کے درپے ہے۔ پیر علی رضا نےبھارتی بربریت کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہندوستان نے 500 سے زائد روز سے مقبوضہ کشمیر میں کرفیو لگا رکھا ہے اور وہاں بدترین ریاستی دہشت گردی جاری ہے ۔بھارتی ریاستی دہشت گردی کشمیری نوجوان نسل ختم کرنے کے درپے ھے۔انہوں نے کہا کہ کشمیر کا فوجی محاصرہ عالمی ضمیر کو جنجھو ڑ رہا ہے ۔دونوں رہنماؤں نے کنٹرول لائن پر جاری بھارتی جارحیت کی مذمت کرتے ہوئے اسے بھارتی بزدلی قرار دیا اور کہا کہ پاکستان کی بہادر مسلح افواج دشمن کے نا پاک عزائم خاک میں ملانے کے لئے پوری طرح تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی گاڑی پر بھارتی فائرنگ کھلی جارحیت ہے جس کا عالمی برادری کو نوٹس لینا چاہئیے۔

مزید :

علاقائی -اسلام آباد -