سٹینڈ کی تعمیر کیخلاف لاری اڈا کے دکانداروں کا احتجاج،نعرے بازی

سٹینڈ کی تعمیر کیخلاف لاری اڈا کے دکانداروں کا احتجاج،نعرے بازی

لاہور ( اسد اقبال )ڈی او لاری اڈا نے اپنے اختیارات کا نا جائز استعما ل کرتے ہو ئے جنرل بس اسٹینڈ بادامی باغ ورکشاپ ایر یا کے سینکڑو ں دکانداروں کا روزگار خطرے میں ڈال دیا ہے ۔1998ءمیں میٹرو پو لیٹن کارپوریشن کی جانب سے دکانداروں کوگاڑیو ں کا کام کرنے کی غرض سے 20ایکڑ پلا ٹ جس کی تحریری الا ٹمنٹ دی گئی تھی پر غیر قانو نی بس اسٹینڈ بیس تعمیر کروانا شر وع کر دیا ہے ۔ جس کے باعث گزشتہ روز سینکڑو ںدکانداروں نے ضلعی حکو مت کے خلا ف زبر دست احتجا جی مظا ہر ہ کیا ۔ مظا ہر ین نے ڈی او لاری اڈا کے خلا ف نعر ہ بازی کرتے ہو ئے انتباہ کیا ہے کہ اگر ریاستی جبر بند نہ کیا گیا تو احتجا ج کا دائرہ کا ر وسیع کرتے ہو ئے وزیر اعلی ہاﺅ س کے سا منے دھر نا دیں گے ۔ دو سر ی جانب انجمن تاجران ور کشاپ ایر یا بادامی باغ ایکشن کمیٹی نے ہائیکو رٹ کا دروازہ کھٹکھٹاتے ہو ئے رٹ پٹیشن دائر کر دی ہے ۔ جس پر فا ضل عدالت نے ڈی سی او لاہور اور ڈی او لاری اڈا کو نو ٹس جاری کر دیئے ہیں ۔ انجمن تاجران ورکشاپ ایر یا بادا می باغ کے صدر شاہد سہیل شاہ نے مظا ہر ین سے خطا ب کر تے ہو ئے کہا کہ ڈی او لاری اڈا نے ورکشاپ ایر یا کے تین سو زائد دکانداروں پر ریا ستی جبر کر تے ہو ئے گاڑیوں کی مینٹینس کے لیے مو جو د اراضی پر دھو کہ دہی سے قبضہ کر لیا ہے ۔ جس سے سینکڑو ں دکانداروں کا کاروبار خطرے سے دو چار ہو گیا ہے ۔ انھو ں نے کہا کہ 1998میں جب مہنگے دامو ں دکانیں فروخت کی گئی تو اس پر میٹرو پو لیٹن کارپور یشن نے دکانداروں کو گاڑیو ں کا کام کرنے کے لیے 20ایکڑ اراضی دی جس کی قانو نی تحریر ی حیثیت ثبو ت کے لیے مو جو د ہے۔جس کی کاپی ڈی او کو بھی دی گئی جنھو ں نے دھو کہ دہی سے اراضی پر بس اسٹینڈ بیس بنوانا شروع کر دیے ہیں ۔جس کی بھر پور مزمت کرتے ہیں ۔ انھو ں نے کہا کہ اس اقدام سے سینکڑوں افراد بے روزگار اور ہزاروں افراد فاقہ کشی کی نو بت تک آ ن پہنچے گے ۔ شاہد سہیل نے کہا کہ ڈی سی او لاہور ورکشاپ ایر یا کے تاجروں کو در پیش مسائل کے ازالہ کے لیے مذاکرات کرے بصور ت دیگر ضلعی حکو مت کے خلا ف سر اپا احتجا ج بنتے ہو ئے وزیر اعلی ہاﺅس کے سا منا دھر نا دیں گے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1