ہارٹیکلچر شعبہ کے بجٹ کو پی ایس ڈی پی آئی میں شامل کیاجائے، احمد جواد

ہارٹیکلچر شعبہ کے بجٹ کو پی ایس ڈی پی آئی میں شامل کیاجائے، احمد جواد

  

اسلام آباد (اے پی پی) فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری( ایف پی سی سی آئی) کی قائمہ کمیٹی برائے زراعت و ہارٹیکلچر کے چیئرمین احمد جواد نے کہا ہے کہ ہارٹیکلچر شعبہ کی برآمدات کے فروغ کیلئے شعبہ کے بجٹ کو سرکاری شعبہ کے ترقیاتی پروگرام ( ایس ڈی پی آئی) میں شامل کرنے کی ضرورت ہے تاکہ ہارٹیکلچر کے شعبہ کیلئے فنڈزکی دستیابی سے شعبہ کی کارکردگی سے حقیقی استفادہ کیا جاسکے۔ احمد جواد نے کہا کہ ہارٹیکلچر کے شعبہ میں ترقی کے وسیع امکان موجود ہیں تاہم فنڈز کی عدم دستیابی سے مسائل پیدا ہوتے ہیں جن کی وجہ سے برآمدات سے حقیقی طور پر استفادہ نہیں کیا جاسکتا۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہارٹیکلچر کے شعبہ کیلئے ترقیاتی فنڈز کی دستیابی کو یقینی بنایا جائے تو اس سے شعبہ کی ملکی برآمدات کو دو تا تین سال کے دوران 12 تا 15 ارب ڈالر سالانہ تک بڑھایا جاسکتا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں احمد جواد نے کہا کہ اس وقت ہارٹیکلچر کی عالمی مارکیٹ کا سالانہ حجم تین کھرب ڈالر سے زائد ہے لیکن عالمی منڈی میں پاکستان کا حصہ انتہائی کم بلکہ نہ ہونے کے برابر ہے، شعبہ کی ترقی کیلئے سالانہ بنیادوں پر پی ایس ڈی پی کے تحت ترقیاتی فنڈز کی دستیابی کے لےئے حکومتی سطح پر اقدامات کی ضرورت ہے اور اس سلسلے میں آئندہ بجٹ میں شعبہ کیلئے ترقیاتی فنڈز شامل کرنے چاہئیں جس سے ملکی برآمدات کے فروغ سے قیمتی زرمبادلہ کما کرملکی میعشت کی ترقی کے اہداف حاصل کئے جاسکتے ہیں۔

مزید :

کامرس -