بھارتی کوسٹ گارڈز کا پاکستانی ماہی گیروں کی کشتی سرکاری سرپرستی میں تباہ کرنے کا اعتراف

بھارتی کوسٹ گارڈز کا پاکستانی ماہی گیروں کی کشتی سرکاری سرپرستی میں تباہ ...

  

 نئی دہلی( آن لائن ،اے این این) بھارت کی سمندری حدود میں پاکستانی کشتی کو تباہ کرنے کا معاملہ شدت اختیار کر گیا، کوسٹ گارڈز کا پاکستانی ماہی گیروں کی کشتی سرکاری سرپرستی میں تباہ کرنے کا اعتراف،وزیر دفاع کی دھمکی کے بعد بی کے لوشالی بیان سے مکر گئے،بھارتی میڈیا نے ڈی آئی جی کے بیان کی ویڈیو جار کر دی،اپوزیشن نے بھارتی حکومت اور وزیر دفاع سے معاملے کی وضاحت مانگ لی۔بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی کوسٹ گارڈز کے ڈی آئی جی اورچیف آف سٹاف بی کے لوشالی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اعتراف کیا ہے کہ 31دسمبر کو بھارتی سمندری حدود میں پاکستان کی کشتی کسی اور نے نہیں بلکہ بھارتی کوسٹ گارڈز نےء سرکاری سرپرستی اور اعلیٰ حکام کے حکم پر تباہ کی تھی۔انھوں نے کہا کہ اس کشتی میں دہشتگرد نہیں بلکہ پاکستان کے ماہی گیر سوار تھے۔کشتی میں کئی دھماکہ خیز مواد نہیں تھا۔اس کشتی کو کوسٹ گارڈز نے دھما کے سے سمندر میں ہی اڑا دیا تھا۔ انھوں نے کہا کہ یہ بات نئی نہیں ہے میں پہلے دن ہی بتا دیا تھا کہ ہم نے پاکستانی کشتی اڑائی ہے۔نہوں نے طنزاً کہا کہ ہم کشتی والوں کو بریانی نہیں کھلانا چاہتے تھے ،ڈی اآئی جی کا کہنا تھا کہ وہ ان لوگوں میں سے ہیں جنہوں نے پاکستانی کشتی کو تباہ کرنے کا حکم دیا تھا۔انھوں نے کہا کہ کشتی کے عملے نے تعاقب پر فائرنگ کی تھی جس کے بعد کشتی کو اڑا دیا گیا تھا۔اس سے قبل ۔31دسمبر 2014 کی رات سمندر میں مبینہ پاکستانی ماہی گیروں کی کشتی دھماکے سے تباہ ہو گئی تھی جس کے بعد اس میں آگ لگ گئی تھی ،بھارتی حکومت نے دعویٰ کیا تھا کہ کشتی بھارتی سمندری حدود میں داخل ہوئی اور پیچھا کئے جائے پر مشتبہ طور پر خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔بھارتی اخبار کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ تفتیش سے یہ بات سامنے اآئی ہے کوسٹ گارڈنے طاقت کا حد سے زیادہ استعمال کیا ، جلتی ہوئی کشتی کی ویڈیو سے یہ بات ثابت ہو جاتی ہے کہ دھماکا خیز مواد کشتی پر موجودتھا ۔ بی کے لوشالی کے اس بیان کے بعد بھارت میں کھلبلی مچ گئی۔بھارت کی اپوزیشن جماعت نے ڈی آئی جی کے اعترافی بیان پر بھارت کی حکومت کو آڑے پاتھوں لیتے ہوئے بھارتی وزیر دفاع سے پارلیمنٹ میں تحریری وضاحت مانگی ہے۔ جس کے بعد بھارتی وزیر دفاع منوج پاریکر نے پانے بیان میں بی کے لوشالی کو دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ ڈی آئی جی اپنی بڑھک بازی پر مصیبت میں پڑ سکتے ہیں ۔لوشالی نے پاکستانی کشتی تباہ کرنے کے حوالے سے محض بڑھک ماری ہے۔ انھوں نے کہا کہ بھارتی وزارت دفاع نے ڈی آئی جی کوسٹ گارڈ سے وضاحت طلب کرلی ہے۔حکومت موزوں وقت پر معاملے پر بیان دے گی۔انھوں نے کہا کہ قوانین کے مطابق بڑھک بازی کی کوئی گنجائش نہیں۔بھارتی وزیر دفاع کی دھمکی کے بعد لوشالی نے قلا بازی کھانے کی کوشش کی اور وضاحتی بیان جاری کیا جس میں موقف اختیار کیا ہے کہ وہ اس معاملے سے آگاہ نہیں تھے،انھوں نے کشتی تباہ کرنے کا بیان نہیں دیا ان کے بیان کو میڈیا نے توڑ مروڑ کر پیش کیا ہے۔ اس وضاحت کے بعد بھارتی میڈیا نے لوشالی کی ویڈیو جاری کی جس میں ثابت ہو گیا ہے کہ ڈی آئی جی نے کشتی کوسرکاری سرپرستی میں تابہ کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

مزید :

علاقائی -