وہاب اور احمد شہزاد پر جرمانہ، آفریدی کو کون پوچھے گا؟

وہاب اور احمد شہزاد پر جرمانہ، آفریدی کو کون پوچھے گا؟

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

دبئی سے خبریں موصول ہوئی ہیں کہ پیسر وہاب ریاض اور اوپنر احمد شہزاد کی طرف سے الگ الگ ندامت کا اظہار کرنے کے باوجود دونوں کے درمیان صلح نہیں ہوئی اور نہ ہی تعلقات بحال ہوئے ہیں۔ یہ خبر کہ شاہد آفریدی ان دونوں کے درمیان صلح کرائیں گے درست ثابت نہیں ہوئی کہ ایسا کوئی کام نہیں ہوا، بلکہ اُلٹا خود شاہد آفریدی نے بلاول بھٹی کے ساتھ نازیبا سلوک کیا اور اسے زخمی کرنے سے بھی گریز نہیں کیا،ان کے خلاف تاحال کسی کارروائی کی اطلاع نہیں۔ایک عرصہ سے ایسی خبریں مل رہی تھیں کہ پاکستان کرکٹ ٹیم میں سب اچھا نہیں اور اختلافات ہیں۔ یہ بھی خبر تھی کہ ڈریسنگ روم میں احمد شہزاد اور عمر اکمل نے چیف کوچ وقار یونس کے بعض ریمارکس پر برا منایا تو تکرار بھی ہوئی،جو دونوں کھلاڑیوں کو مہنگی پڑی کہ کوچ اِن سے ناراض ہو گئے اور ہر ممکن کوشش کی کہ وہ دونوں ہی ٹیم سے باہر ہوں، ان کی پرفارمنس بھی متاثر ہوئی تھی۔ احمد شہزاد اور وہاب کا میچ کے دوران کھلے بندوں تنازعہ ہوا اور میچ ریفری نے جرمانہ بھی کیا یہ ظاہر کرنے کے لئے کافی ہے کہ ایسا اچانک نہیں ، رنجش پہلے سے موجود تھی۔ان دونوں کے خلاف تو کارروائی ہوئی، لیکن شاہد آفریدی کو کسی نے نہیں پوچھا کہ وہ ایک بااثر طاقتور کھلاڑی ہیں۔ ایسے کہ بار بار بری پرفارمنس کے باوجود وہ بدستور ٹی 20 کے کپتان ہیں۔ شاہد آفریدی نے کھلے بندوں بیٹ مار کر بلاول کو زور دار دھکا دے کر گرایا اور صفر پر بھٹی کے ہاتھوں اپنے آؤٹ ہونے کا بدلہ لیا۔ بلاول بھٹی کو کمر میں چوٹ بھی آئی، شاہد کو کسی نے نہیں پوچھا۔ اس تمام تر صورت حال کا نوٹس تو اصل میں پاکستان کرکٹ بورڈ کو لینا اور اسے تحقیق کر کے سازشی اور غنڈہ گردی جیسے اقدامات کو ختم کرنا چاہئے ورنہ پہلے سے گری ٹیم مزید پریشانیوں کا شکار ہو گی۔ بورڈ کو از خود کارروائی کرنا ہو گی، نظم و ضبط کے نام پر چھوٹے کھلاڑیوں کو دبا کر سینئر کو کھلی چھٹی دینا کرکٹ کے لئے مفید نہیں۔


مزید :

اداریہ -