سعودی مجلس شوریٰ کے ارکان کا واٹس ایپ کی بندش پر برہمی کا اظہار

سعودی مجلس شوریٰ کے ارکان کا واٹس ایپ کی بندش پر برہمی کا اظہار

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

جدہ (محمد اکرم اسد) سعودی مجلس شوریٰ کے ارکان نے واٹس ایپ کی بندش پر برہمی کا اظہار کیا ہے اور واضح کیا ہے کہ موبائل کمپنیاں صارفین کی جیبیں خالی کررہی ہیں۔ ارکان شوریٰ نے انفارمیشن ٹیکنالوجی اینڈ کمیونیکیشن بورڈ پر تابڑ توڑ حملے کئے ، خاص طور پر واٹس ایپ کی بندش کے فیصلے پر کڑی نکتہ چینی کی۔ رکن شوریٰ عبداللہ الصیفی نے کہا کہ بورڈ اور موبائل کمپنیاں لوگوں کی جیبیں خالی کررہی ہیں اور معیاری خدمات فراہم کرنے میں کوتاہی دکھارہی ہیں، بورڈ سارفین کے بجائے موبائل کمپنیوں کا ساتھ دے رہا ہے۔ ان کی سرمایہ کاری بڑھ رہی ہے اور خدمات گھٹ رہی ہیں دیگر ممالک کے مقابلے میں سعودی عرب میں مواصلاتی سہولتوں کی لاگت زیادہ ہے۔ الصیفی نے سوال کیا بورڈ نے کس حق کے تحت واٹس ایپ کے صوتی مکالموں کی سہولت ختم کرائی، عجیب بات یہ ہے کہ یہی بورڈ اس وقت تماشائی بنارہتا ہے جب صارفین شکایات کرتے ہیں اور مواصلاتی کمپنیوں کے خلاف کارروائی نہیں کی جاتی، اصولی بات یہ ہے کہ بورڈ کمپنیوں کے استحصال سے عوام کو بچائیں مگر مشاہدہ اس کے برعکس ہے۔ ڈاکٹر عبدالرحمن العطوی نے اس بات پر حیرت ظاہر کی کہ بورڈ اخلاق سوز مناظر پیش کرنیوالی ویب سائٹ کی نشاندہی اور ان سے متعلق کارروائی کیوں نہیں کرپاتا۔ ڈاکٹر نورہ العدوان نے کہا کہ بورڈ سماجی ویب سائٹ کی منفی سرگرمیوں پر تماشائی کیوں بنا ہوا ہے، ارکان شوریٰ نے ایک الزام یہ بھی لگایا کہ بورڈ موبائل کمپنیوں کا وکیل بن گیا ہے۔ ارکان شوریٰ نے موبائل کمپنیوں کی ناقص کارکردگی پر بھی ناگواری ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ مواصلاتی خدمات کے نرخ بڑھتے جارہے ہیں اور معیار گرتاجارہاہے۔

مزید :

علاقائی -