”پاکستان پائندہ باد، بچے زندہ باد“

”پاکستان پائندہ باد، بچے زندہ باد“
”پاکستان پائندہ باد، بچے زندہ باد“

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ سکولوں کی تعمیر و ترقی کو جاری رکھیں گے اور بچوں کو بہتر سے بہترین سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ بچوں کے کلاس رومز کا دورہ کر کے بہت خوشی محسوس ہوئی، غیر معیاری تعمیر ہرگز برداشت نہیں کریں گے، سکول کے مختلف حصوں میں معیار تعمیر بہتر کیا جائے۔ دہشت گردی کیلئے آپریشن شروع کیا اور آئندہ 2 سال میں لوڈشیڈنگ بھی ختم کر دی گے، پاکستان پائندہ باد، بچے زندہ باد۔
تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نواز شریف آزاد خان شہید ماڈل سکول ایف ایٹ تھری پہنچے۔ وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیر مملکت کیڈ طارق فضل چوہدری، ڈاکٹر آصف کرمانی، مریم نواز شریف اور اسلام آباد کے نومنتخب میئر انصر عزیز بھی ان کے ہمراہ تھے۔ وزیراعظم نواز شریف نے سکول میں جدید سہولتوں کی فراہمی کا افتتاح کیا جس کے بعد سکول کے مختلف حصوں اور کلاس رومز کا دورہ کر کے بچوں سے بات چیت کی اور ان سے مختلف سوالات پوچھے۔ انہوں نے بچوں سے ”ا، ب“ اور ”اے، بی ،سی، ڈی“ سنی۔ وزیراعظم نے بچوں سے جغرافیہ سے متعلق سوالات بھی کئے اور سکول کی حالت کے بارے میں بھی پوچھا جس پر بچوں کا کہنا تھا کہ پہلے سکول ”گندہ“ تھا لیکن اب ”بہت اچھا“ ہو گیا ہے۔ وزیراعظم نے بچوں سے دل لگا کر محنت کرنے کی تلقین بھی کی۔
بعد ازاں سکول کے ہال میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ سکول کی عمارت، کلاس رومز، لیب، لائبری، واش رومز اور دیگر تعمیرات کو دیکھ کر بہت خوشی ہوئی ہے تاہم کھیل کا میدان اور باسکٹ بال کورٹ کی تعمیر انتہائی ناقص ہے جسے فوراً ٹھیک کرایا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ سی ڈی اے نے تعمیر کیلئے پیسے لئے ہیں تو کوالٹی بھی ”اے ون“ ہونی چاہئے اور ناقص تعمیر ہرگز برداشت نہیں کی جائے گی۔ باسکٹ بال کورٹ اور کھیل کے میدان کی کوالٹی بہتر کرنے کیلئے اضافی پیسے بھی نہیں دیئے جائیں گے اور جتنی لاگت میں یہ تعمیر ہوا ہے اسی میں اسے بہتر بھی بنایا جائے۔ اسی طرح سیڑھیوں پر لگی ٹائلوں پر بھی پھسلن ہے جس کے باعث بچوں کے زخمی ہونے کا خطرہ ہے، اسے بھی فوراً تبدیل کرایا جائے تاکہ کسی بھی قسم کا نقصان نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ بچوں کو بہتر تعلیمی سہولتوں کی فراہمی سے دلی خوشی ہوئی ہے اور جن 22 سکولوں میں تعمیراتی کام مکمل ہو چکا ہے ان کے معیار کا جائزہ لیا جائے اور اگر کوئی کمی کوتاہی ہے تو اسے فوراً دور کیا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ سکول کے تعمیراتی معیار کیساتھ ساتھ پیسے کا پانی بھی صاف مہیا کیا جائے اور اساتذہ کی حاضری کو بھی یقینی بنایا جائے تاکہ انہیں صحیح معنوں میں تعلیم حاصل کرنے کا موقع مل سکے۔ وزیراعظم نے بچوں کیلئے کھیلوں کی کٹس مہیا کرنے کا اعلان بھی کیا اور کہا کہ سکول انتظامیہ کے کہنے پر کچھ کٹس فراہم کر دی گئی ہیں جبکہ مستحق بچوں کیلئے مزید کٹس بھی فراہم کی جائیں گی۔ ان کا کہنا تھا کہ سکول میں کارکردگی کے حساب سے ٹاپ 30 بچے جو کھیل پسند کرتے ہیں انہیں ان کی کٹس فراہم کی جائیں۔
وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گردی بہت بڑا مسئلہ تھا لیکن ہم نے آ کر آپریشن شروع کیا اور اب بہت حد تک اس پر قابو پایا جا چکا ہے۔ پاکستان اسی طرح آگے بڑھتا رہے گا اور دہشت گردی ختم ہو جائے گی۔ اسی طرح ملک میں لوڈشیڈنگ کی صورتحال ابتر تھی تاہم اب کم ہو گئی ہے۔ اس موقع پر انہوں نے بچوں سے لوڈشیڈنگ میں کمی سے متعلق سوال پوچھا تو جواب ہاں میں سن کر وزیراعظم نے اظہار مسرت کیا اور کہا کہ بچے من کے سچے ہوتے ہیں اور جو بھی کہتے ہیں ہمیشہ سچ کہتے ہیں۔ انہوں نے بچوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ طارق فضل چوہدری بھی اسی سکول میں پڑھے ہیں اور آج وزیر بن گئے ہیں، اگر آپ بھی دل لگا کر پڑھیں گے تو آگے جا کر کوئی صدر بن جائے گا اور کوئی وزیراعظم بن کر ملک کا نام روشن کرے گا۔ اس موقع پر وزیراعظم نواز شریف کو ایک ”پرچی“ مہیا کی گئی جس پر درج تھا ” سکول کے ہال کا نام تبدیل کر کے نواز شریف آڈیٹوریم رکھ دیا گیا ہے“۔
اس پر وزیراعظم نے کہا کہ اگر یہ ہال میرے نام پر ہے تو اسے مزید اچھا ہونا چاہئے تھا، اس کے ساتھ ہی انہوں نے پوچھا کہ یہ نام کس نے رکھا ہے تو سامعین میں بیٹھے طارق فضل چوہدری نے پہلے ہاتھ بلند کیا اور پھر اپنی نشست سے کھڑے ہو گئے جس پر وزیراعظم نے سوال کیا کہ آپ نے آڈیٹوریم کا نام تبدیل کرنے کیلئے سکول کے پرنسپل سے اجازت لی تھی نا، سامعین بے اختیار مسکرا اٹھے اور ہر سو قہقہے بکھر گئے جبکہ وزیراعظم یہ کہتے ہوئے چل دیئے، ” پاکستان پائندہ باد، بچے زندہ باد“۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -