ہائی کورٹ نے ٹیلی نار سمیت دو کمپنیوں کی درخواست پر سیلز ٹیکس ریکوری نوٹسز پر عمل درآمد روک دیا

ہائی کورٹ نے ٹیلی نار سمیت دو کمپنیوں کی درخواست پر سیلز ٹیکس ریکوری نوٹسز پر ...
ہائی کورٹ نے ٹیلی نار سمیت دو کمپنیوں کی درخواست پر سیلز ٹیکس ریکوری نوٹسز پر عمل درآمد روک دیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے پنجاب ریونیو اتھارٹی کی طرف سے دو کمپنیوں کو بھیجے گئے سیلز ٹیکس ریکوری کے نوٹسز پر عمل دآمد روکتے ہوئے پنجاب حکومت اور اتھارٹی سے 2 ہفتوں میں جواب طلب کر لیا۔مسٹرجسٹس سید منصور علی شاہ نے فلائنگ سیمنٹ کمپنی اور ٹیلی نار پاکستان کی درخواستوں پر سماعت کی، درخواست گزاروں کی طرف سے رانا افضل اور علی سبطین فضلی ایڈووکیٹس نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب ریونیو اتھارٹی نے درخواست گزاروں کو نئی تاریخیں ڈال کر سیلز ٹیکس ریکوری کے پرانے نوٹسز بھجوانا شروع کر دیئے ہیں جو غیرقانونی ہیں، اتھارٹی نے پنجاب اسمبلی سے ایکٹ میں ترمیم کروا کراسے منظور کروا لیا ہے، 2016ءایکٹ میں کئی گئی ترمیم کے مطابق چیئرپرسن کے ماضی کے ہونے والے تمام اقدامات کو بھی تحفظ دیا گیا ہے، اتھارٹی کی طرف سے بھجوائے جانے والے نوٹسز میں سیلز ٹیکس کا تخمینہ صحیح نہیں ہے، انہوں نے ٹیلی نار کمپنی کے حوالے سے بتایا گیا کہ انٹرنیٹ ڈیٹا سروسز پر ٹیکس ختم کر کے دوبارہ لگا دیا گیا، ٹیکس لگانے کا اختیار پارلیمنٹ کو ہے، ایکٹ میںنوٹیفکیشن کے ذریعے ترمیم کر کے ٹیکس عائد نہیں کیا جا سکتا ، انہوںنے استدعا کی کہ پنجاب ریونیو اتھارٹی کی طرف سے بھجوائے گئے ٹیکس ریکوری اور دیگر نوٹسز معطل کئے جائیں، عدالت نے سماعت کے بعد اتھارٹی کے نوٹسز پر عملدرآمد روکتے ہوئے حکومت اور اتھارٹی سے دو ہفتوں میں جواب طلب کر لیاہے۔

مزید :

لاہور -