انسٹی ٹیوٹ آف سدرن پنجاب کا پہلا کانووکیشن طلبہ میں ڈگریاں، گولڈ میڈل تقسیم

انسٹی ٹیوٹ آف سدرن پنجاب کا پہلا کانووکیشن طلبہ میں ڈگریاں، گولڈ میڈل تقسیم

  

ملتان(سٹاف رپورٹر)وزیر مملکت برائے تعلیم ‘ٹیکنکل ٹریننگ اور اینٹی نارکوٹیکس انجینئر بلیغ الرحما ن نے کہا ہے کہ دھماکوں کی سیریز نے قوم کو رنجیدہ کردیا ہے‘ ملک میں آخری دہشت گرد کے خاتمے تک پیچھا جاری رہے گا ‘ دہشت گردی بڑا المیہ اور قومی مسئلہ ہے ‘ مخالف سیاسی جماعتیں اس ایشو پر پوائنٹ سکورنگ کرنے کی بجائے دہشتگردوں کو مکمل نیست و نابود کرنے کے لئے حکومت اور سکیورٹی اداروں کا ساتھ دیں ‘دہشت گردی کے سرے افغانستان سے ملنا افسوسناک ہے ‘ اس سلسلے میں افغان حکومت سے بات کر رہے ہیں اوردہشت گردی کرنے والوں کا اب بین الاقوامی سطح پر بھی تعاقب کررہے ہیں‘ وہ گزشتہ روز ملتان میں انسٹی ٹیوٹ آف سدرن پنجاب کے پہلے کانووکیشن کی تقریب سے خطاب کررہے تھے‘ اس موقع پر وزیر اعظم کے خصوصی مشیر برائے لا اینڈ جسٹس بیرسٹر ظفر اللہ،آئی ایس پی کے ریکٹر عاصم نذیر بھی موجود تھے ‘وزیر مملکت نے کہا کہ ملک ایک بار پھر دہشت گردی کی لیپٹ میں ہے ، مگر ہماری سکیورٹی ایجنسیوں نے اس نیٹ ورک کو پکڑ لیا ہے‘ سخت ترین ایکشن لیا جا رہا ہے ‘اس بار ملک دشمنوں کا بین الاقوامی سطح پر بھی پیچھا کررہے ہیں‘ انہوں نے کہاکہ شہدا کے خون کا بدلہ لیا جائے گا، ہمارے جوانوں نے جان کا نذرانہ دے کر اس ملک کو تباہی سے بچایا ہے ، حکومت نے تشددکی لہر کوروکنے کیلئے خصوصی اقدامات کئے ہیں‘ماضی کی نسبت دہشت گردی کم ہوگئی ہے ،گڈگورننس کی وجہ سے ریاستی ادارے اب کام کرتے نظرآرہے ہیں ، انہوں نے کہا کہموجودہ حکومت معاشی ترقی کیلئے موثر اقدامات کررہی ہے ، آئندہ سال لوڈ شیڈنگ بھی ختم ہوجائیگی ‘ انہوں نے کہا کہ تعلیمی اداروں میں قران پاک کی تعلیم کے لئے بل پا س ہوچکا ہے ، اس کے لئے تمام مکتبہ فکرکی مشاورت سے کتابیں بھی فائنل کرلی گئیں ہیں ‘اب قران کی تعلیم سرکار کی سرپرستی میں ہوگی ‘پہلی سے 5ویں تک ناظرہ قران پاک پڑھایا جائیگا جبکہ 6ویں سے میڑک تک قران پاک کاترجمہ پڑھا یا جائے گا، ہم ایسا نظام تعلیم وضح کرنے کی کوشش کررہے ہیں جو طلبا کو دین اوردنیا کی مکمل تعلیم دیتا ہو‘ اس سلسلے میں قومی نصاب کونسل قائم کردی گئی ہے ، تعلیمی اداروں میں قران پاک کی تعلیم کیلئے تمام مکتبہ فکر کی مشاورت سے کتابیں منتخب کرلی گئیں ہیں‘ سرکاری اور پرائیویٹ سکولوں میں قرآن کی تعلیم لازمی قرار دی جائے گی‘یہ حکومت کا اہم منصوبہ ہے جس پر تیزی سے کام جاری ہے ‘ انہو ں نے کہا کہ سابق حکومتوں کے دور میں ترجیحات اور تھیں جس کی وجہ سے معاشی ترقی نہیں ہوئی ، مسلم لیگ کی حکومت نے ملک میں خصوصاً ملتان میں نئے پراجیکٹ دئے ہیں ، میٹرو بس منصوبہ اس کی مثال ہے مگر یہ یہاں کی عوا م کیلئے کافی نہیں ہے ‘66 برس کی محرومیوں کا ازالہ چند ارب کے منصوبے نہیں کرسکتے ‘یہاں ابھی بہت کچھ ہونا باقی ہے ، تاہم پاکستان میں ایجوکیشن ، اکانومی، صحت کے شعبوں میں کافی بہتری آئی ہے ، انہو ں نے کہا کہ انرجی کا بحران اب ختم ہونے کو ہے ‘ وہ وقت بھی تھا جب 20گھنٹے لوڈ شیڈنگ ہوتی تھی ‘ملتان والوں کو اس کا احساس نہیں تھا کیونکہ اس وقت کے وزیراعظم کی وجہ سے یہاں کے لوگوں کو کچھ سہولت دی گئی تھی مگر جنوبی پنجاب کے باسی بجلی کوترس گئے تھے ،اب ہم 2018 میں لوڈ شیڈنگ ختم کرنے جارہے ہیں ، انہوں نے کہا کہ سکولوں میں طلبا کی تعداد بڑھ رہی ہے ‘معیار تعلیم بھی بہتر ہورہا ہے ‘معیار ی تعلیم کے نئے پیرا میٹر مقرر کرلیے گئے ہیں‘ انہوں نے مزید کہا کہ نوجوان کسی بھی ملک کا اثاثہ ہوتے ہیں ‘اس لئے اعلیٰ تعلیم حاصل کرنیوالے طلبا اپنی عملی زندگی میں عوا م کو سہولت دیں ‘بعد ازاں انسٹی ٹیوٹ کے 52طلبا وطالبات کو گولڈ میڈل دئیے گئے اور 220طلبا وطالباتمیں ڈگریاں تقسیم کی گئیں۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -