''مجھے ایک ہی دن میں 27 ہارٹ اٹیک ہوئے لیکن میں پھر بھی بچ گیا کیونکہ۔۔۔'' ایک شخص کے ساتھ ناقابل یقین واقعہ پیش آ گیا، جان کر آپ کا دل بھی دہل جائے گا

''مجھے ایک ہی دن میں 27 ہارٹ اٹیک ہوئے لیکن میں پھر بھی بچ گیا کیونکہ۔۔۔'' ایک ...
''مجھے ایک ہی دن میں 27 ہارٹ اٹیک ہوئے لیکن میں پھر بھی بچ گیا کیونکہ۔۔۔'' ایک شخص کے ساتھ ناقابل یقین واقعہ پیش آ گیا، جان کر آپ کا دل بھی دہل جائے گا

  

آسٹن (ڈیلی پاکستان آن لائن) ”جسے اللہ رکھے اسے کون چکھے۔۔۔“ یہ ضرب المثل تو آپ نے سنی ہوگی لیکن یہ اس شخص پر بالکل صحیح ثابت ہوتی ہے جسے ایک ہی دن میں27 بار دل کا دورہ پڑا لیکن ڈاکٹروں نے سرتوڑ کوشش کیساتھ اسے بچا لیا اور اب وہ صحت مند زندگی گزار رہا ہے۔

شادی کے سیزن میں اس چیز سے بال دھونے سے ان میں ایسی چمک آئے گی کہ سب آپ کی تعریف کرنے پر مجبور ہوجائیں گے

تفصیلات کے مطابق 54 سالہ رے ووڈ ہال ویسٹ مڈ لینڈز میں رہتے ہیں اور 3 بچوں کے باپ ہیں، وہ واکنگ فٹ بال کھیل رہے تھے کہ انہیں دل کا دورہ پڑا لیکن وہ یہ سمجھتے رہے کہ مسلسل کھیلنے کے باعث ڈی ہائیڈریشن کا شکار ہو گئے ہیں۔ رے کو سٹریچر کے ذریعے گراﺅنڈ سے باہر لے جایا گیا تو حیرت انگیز طور پر وہ اپنی ٹانگوں پر کھڑے ہو گئے اور خود چل کر اپنی گاڑی تک گئے۔

ابھی وہ اپنی کار تک پہنچے ہی تھے کہ میچ دیکھنے کیلئے وہاں موجود ایک شخص، جو ہسپتال میں نرس کے طور پر کام کرتا رہا ہے، نے ان کی حالت کے پیش نظر گاڑی چلانے سے منع کر دیا اورضد کر کے ایمبولینس بلا لی۔ سافٹ ڈرنکس فرم کیلئے کام کرنے والے ووڈ ہال کو پیرا میڈیکل سٹاف کے عملے نے بتایا کہ انہیں دل کا دورہ پڑا ہے اور اس کیساتھ ہی انہیں وورسیٹ شائر ہسپتال منتقل کر دیا گیا جہاں انہیں مزید 26 دل کے دورے پڑے۔

ہسپتال پہنچتے ہی کارڈیالوجی ٹیم نے ان کا معائنہ کیا اور آپریشن تھیٹر لے گئے اور پھر خون کی گردش کو بڑھانے کیلئے ان کی آرٹری میں 2 سٹنٹس ڈالے گئے۔ ان کی فیملی کو بتایا گیا کہ وہ شائد زندہ نہ بچ سکیں اور اگر بچ بھی گئے تو ان کے دماغ کو شدید نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔

TapMad نے ہمہ وقت سرگرم رہنے والوں کے لئے انٹرٹینمنٹ کی نئی دنیا متعارف کروادی

ہسپتال کے عملے نے ان کی جان بچانے کیلئے انتھک محنت کی کیونکہ اس سے پہلے انہیں کبھی بھی دل کے مسائل سے دوچار نہیں ہونا پڑا تھا اور پھر جیسے معجزہ ہی ہو گیا اور ووڈ زندہ بچ گئے۔ ووڈہال تاحال اس سے ریکور ہونے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن ان کا کہنا ہے کہ وہ اب روزانہ کئی میل تک پیدل چلتے ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -