سٹریٹجک پالیسی پلاننگ سیل قومی سلامتی ڈویژن کا حصہ ہے:ڈاکٹر معید یوسف

سٹریٹجک پالیسی پلاننگ سیل قومی سلامتی ڈویژن کا حصہ ہے:ڈاکٹر معید یوسف
سٹریٹجک پالیسی پلاننگ سیل قومی سلامتی ڈویژن کا حصہ ہے:ڈاکٹر معید یوسف

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے نیشنل سیکیورٹی ڈویژن اور سٹریٹجک پالیسی پلاننگ سیل، ڈاکٹر معید ڈبلیو یوسف نے اقتصادی ڈپلومیسی سے متعلق سٹیئرنگ کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کی۔

کمیٹی نےمعاشی سفارت کاری کےذریعے ملک کےبین الاقوامی موقف کوبہتربنانےکےلئےحکمت عملی تیار کرنے کےطریقوں پرتبادلہ خیال کیا۔ اس اجلاس میں مختلف وزارتوں کے عہدیدار موجود تھے جنہوں نے وزارتوں کے مابین ہم آہنگی کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا۔نیشنل سیکیورٹی ڈویژن میں واقع سٹریٹجک پالیسی پلاننگ سیل (ایس پی پی سی) کو وزیر اعظم نے ہدایت کی ہے کہ وہ روایتی، معاشی اور انسانی سلامتی سمیت مختلف جہتوں میں سیکیورٹی کی جامع صورتحال کا جائزہ لے اور پاکستان کے داخلی اور بیرونی چیلنجوں کے تزویراتی ردعمل پرکارکردگی فراہم کرے۔ اس سلسلے میں ایس پی پی سی نے اقتصادی ڈپلومیسی سے متعلق حکمت عملی پر غور کرنے کے لیے سٹیئرنگ کمیٹی اور ماہر ورکنگ گروپ قائم کیا ہے۔ ان کا مقصد ایک جامع منصوبہ تیار کرنا ہے جو مختلف وزارتوں کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرے گا تاکہ دوسرے ملکوں کے ساتھ معاشی سفارت کاری کے سلسلے میں ہمارے ملک کی قابلیت کو بہتر بنایا جاسکے۔

معاون خصوصی ڈاکٹر معید یوسف نے کہا کہ اقتصادی ڈپلومیسی میں فنانس، معاشیات، تجارت، لیبر، سیاحت اور دیگر شعبہ شامل ہیں، ان سب کو دنیا کے ساتھ بہتر روابط کے حصول اور معاشی ترقی کو تیز کرنے کے لئے باہمی تعاون کیا جانا چاہئے۔اجلاس کے شرکاء نے ان شعبوں پر تبادلہ خیال کیا جن میں پاکستان دوطرفہ اقتصادی اور سفارتی تعلقات کو بہتر بنانے کے لئے معاشی سفارتی کامیابی سے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ سٹیئرنگ کمیٹی میں حکمت عملی پر تبادلہ خیال ہوگا اور حتمی شکل دی جائے گی۔معاون خصوصی ڈاکٹر معید یوسف نے کہا کہ سیاستدانوں، تکنیکی ماہرین اور بیوروکریسی کے ملاپ سے ملک کے لیے بہتر نتائج حاصل کیے جاسکتے ہیں۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد