صحافی عزیز میمن کے قتل پر بالآخر بلاول بھٹو کا بیان بھی سامنے آگیا

صحافی عزیز میمن کے قتل پر بالآخر بلاول بھٹو کا بیان بھی سامنے آگیا
صحافی عزیز میمن کے قتل پر بالآخر بلاول بھٹو کا بیان بھی سامنے آگیا

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ سندھ میں دو دن کے اندر اندر ایک ایم پی اے اور ایک صحافی کو قتل کیا گیا ،ہم چاہتے ہیں کہ انصاف ہو اور پولیس کا نظام غیر سیاسی ہو ۔ان کا کہنا تھا کہ اگر صحافی عزیز میمن کے اہل خانہ جوڈیشل کمیشن چاہتے ہیں توہم جوڈیشل بنا دیں گے ،اگر وہ چاہتے ہیں کہ کوئی پولیس افسر تحقیقات کرے تو ایسا کرنے کے لیے بھی تیا رہیں ۔بلاول بھٹو نے کہا کہ صحافیوں کو قتل اور اغواکرنے کی کہانی صرف عزیز میمن تک محدود نہیں ہے ،پورے ملک میں صحافیوں کے خلاف جو ہتھکنڈے استعمال ہو رہے ہیں سب کو پتہ ہے ، اوچھے ہتھکنڈوں کے باوجود ہماری حکومت کے خلاف جدوجہد جاری رہے گی۔

میڈ یا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ میں تو چاہوں گا کہ موقعہ ملتے ہی حکومت گرا دوں جس کی وجہ معاشی حالات، انسانی جمہوری حقوق پر قدغن اور میڈیا پر پابندیاں ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہم بھی آئی ایم ایف کے پاس گئے تھے لیکن ہم نے ان کی ہر شرط نہیں مانی تھی۔ ہم نے دہشت گردی کا مقابلہ کیا، جنگ لڑی، دو سیلابوں کا مقابلہ کیا اور تنخواہوں میں سوا سو فیصد سے زیادہ اضافہ کیا گیا تھا۔حکومت پر تنقید کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ اس حکومت کا کوئی اسٹیک ہی نہیں ہے اس لیے آئی ایم ایف کی ہر شرط مان رہے ہیں۔ میں اس وقت حکومت کے خلاف تحریک کے لیے تمام طبقات سے رابطے کرنے نکلا ہوں اور ہم کنونشنز اور سیمینارز کے ذریعے عوام سے رابطہ کریں گے۔انہوں نے کہا کہ حکومت کے تمام تر اوچھے ہتھکنڈوں کے باوجود ان کے خلاف اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے۔ آپ مجھے بتائیں کہ حکومت کو گرانے کے کتنے طریقے ہیں ؟ لیکن ہم تو آئینی، جمہوری اور قانونی طریقے سے حکومت ختم کرنا چاہتے ہیں۔ ہم کوئی غیر جمہوری سازش نہیں کریں گے۔

مزید : اہم خبریں /قومی