اسرائیل کو تسلیم نہ کرنا خارجہ پالیسی کامستقل جزو ہے،شمشاد احمد خان

اسرائیل کو تسلیم نہ کرنا خارجہ پالیسی کامستقل جزو ہے،شمشاد احمد خان

  

کراچی (پ ر) اسرائیل کو تسلیم کرنے کے حوالے سے پاکستان کا اصولی موقف ملکی خارجہ پالیسی کا مستقل اور لازمی جز وہے اور کسی بھی شخص کی جانب سے اس متعلق شک و شبہ کے اظہار یا سوال اٹھانے کا کوئی جوازنہیں۔ ان تاثرات کا اظہار سابق سیکرٹری خارجہ  شمشاد احمد خان نے بین الاقوامی جریدے ساؤتھ ایشیاکے فروری 2021 کے شمارے میں شائع ایک خصوصی مضمون میں کیاجو جریدے کی سرِ ورق اسٹوری بعنوان ”پاکستان کو اسرائیلی ریاست کو تسلیم کرنا چاہیے یا نہیں“کا حصہ ہے۔شمشاد احمد خان کے مطابق پاکستان نے روزِ اوّل سے فلسطین- اسرائیل تنازعہ کی اقوامِ متحدہ اور اسلامی ممالک کی تعاون تنظیم او آئی سی کی قراردادوں کے مطابق دو ریاستی حل کی حمایت کی ہے جس میں 1967 کی اسرائیل عرب جنگ سے قبل جغرافیائی سرحدوں کا احیاء اور القدس کی آزاد فلسطینی ریاست کی بحیثیت دارالحکومت بحالی شامل ہے۔ ساؤتھ ایشیا کے حالیہ شمارے میں بہت سے اسرائیلی تجزیہ نگاروں کے مضامین بھی شامل ہیں جن میں پروفیسرگل ٹرائے، پروفیسر ایلی پوڈے، ڈاکٹر اوفر اسرائیلی اور ڈاکٹر امانیول نیوون سرِ فہرست ہیں۔ جریدے میں لیفٹیننٹ جنرل (ر) اسد درانی، فلسطینی صحافی اور ”دی فلسطین کرونیکل“کے مدیر رمزی بیراؤڈ، امریکہ میں ڈیموکریٹک پارٹی کی رکن صابریہ بیلنڈ چوہدری اور امریکی مصنف نذر السلام کے مضامین بھی شامل ہیں۔

مزید :

صفحہ آخر -