میاں بیوی نے ہوٹل میں قربت کے لمحات گزارے، پھر باہر واک کرنے گئے تو معلوم ہوا شیشے سے تو سب نظر آتا ہے، ماہر نفسیات کے پاس جانا پڑ گیا

میاں بیوی نے ہوٹل میں قربت کے لمحات گزارے، پھر باہر واک کرنے گئے تو معلوم ہوا ...
میاں بیوی نے ہوٹل میں قربت کے لمحات گزارے، پھر باہر واک کرنے گئے تو معلوم ہوا شیشے سے تو سب نظر آتا ہے، ماہر نفسیات کے پاس جانا پڑ گیا
سورس: Facebook

  

سیﺅل(مانیٹرنگ ڈیسک) جنوبی کوریا میں ایک نوبیاہتا جوڑا جیجو نامی جزیرے پر ہنی مون منانے گیا اور وہاں گرانڈ جوسن جیجو ہوٹل میں قیام پذیر ہوا۔ اس لگژری ہوٹل میں قیام کے دوران دونوں میاں بیوی ساﺅنا (Sauna)کے مزے بھی لیتے رہے اور جب ہوٹل میں ان کا آخری دن تھا تو اس ساﺅنا کے متعلق ایک ایسا انکشاف ہوا کہ دونوں کے پیروں تلے زمین نکل گئی۔ میل آن لائن کے مطابق اس ساﺅنا کے کھڑکیوں پر لگے شیشے، جنہیں یہ نوبیاہتا جوڑا سمجھ رہا تھا کہ ان شیشوں سے اندر سے باہر کی طرف تو نظر آتا ہے لیکن باہر سے اندر کی طرف نظر نہیں آتا۔ حقیقت میں ان شیشوں سے باہر کی طرف سے اندر بھی نظر آتا تھا اوریہ میاں بیوی اس حقیقت سے لاعلم ساﺅنا میں برہنہ بھاپ سے غسل کرتے رہے تھے۔

 اس نوجوان نے ہوٹل کے خلاف درج کروائی گئی رپورٹ میں بتایا ہے کہ ”ہوٹل کے سٹاف نے ہمیں بتایا تھا کہ ساﺅنا کے شیشوں سے یک طرفہ نظر آتا ہے۔ان سے باہر سے کوئی اندر نہیں دیکھ سکتا۔ چنانچہ ہم میاں بیوی تولیہ لپیٹے بغیرمکمل برہنہ حالت میں ہی بھاپ سے غسل کرتے رہے۔ میری بیوی تو روزانہ اس ساﺅنا میں غسل کرتی رہی تھی۔ آخری دن جب ہم ہوٹل کا چکر لگا رہے تھے تو اس ساﺅنا کے قریب سے گزرتے ہوئے ہم نے دیکھا کہ اس کی کھڑکیوں کے شیشوں سے اندر کا منظر صاف نظر آ رہا تھا۔اس پر ہم دونوں کو ایسا ذہنی جھٹکا لگا کہ اب ہم ماہر نفسیات سے کونسلنگ لے رہے ہیں۔ہوٹل کی انتظامیہ کی طرف سے اس نوبیاہتا جوڑے سے معافی مانگتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ہوٹل کا سٹاف غلطی سے ساﺅنا کی کھڑکیوں کے شیشوں کے آگے لگے آہنی پردے نیچے کرنا بھول گیا تھا۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -