صنعتوں، سی این جی سیکٹرکو فراہمی بند کرنے کے باوجود گیس بحران کم نہ ہو سکا

صنعتوں، سی این جی سیکٹرکو فراہمی بند کرنے کے باوجود گیس بحران کم نہ ہو سکا

لاہور (خبرنگار) گیس بحران میں مزید شدت آنے پر شارٹ فال 1700 ملین کیوبک فٹ تک پہنچ گیا ہے ۔ تفصیلات کے مطابق صنعتوں اور سی این جی سیکٹر کی گیس بند کرنے کے باوجود گیس بحران میں کمی نہیں آ سکی ہے اور سردی کی شدت بڑھنے پر گیس بحران میں بھی مزید شدت آ گئی ہے جس کے باعث گیس کی ڈیمانڈ اور سپلائی میں خطرناک حد تک فرق آ گیا ہے اور گیس کی شدید ترین کمی واقع ہونے پر شارٹ فال 1500 ملین کیوبک فٹ سے تجاوز کر کے 1700 ملین کیوبک فٹ تک پہنچ گیا ہے جس پر گیس حکام تمام تر اقدامات کے باوجود گیس بحران میں کمی کرنے میں ناکام ہو کر رہ گئے ہیں ۔ اس حوالے سے گیس کمپنی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ گیس بحران میں شدت برقرار رہے گی اور 10 فروری تک گیس بحران میں کمی آنے کا امکان نہیں ہے۔ جبکہ گیس کمپنی کے جی ایم سید جواد نسیم کا کہنا ہے کہ سردی کی شدت کے باعث گیس ہیٹر اور گیزر کا استعمال بڑھ گیا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ گیس کی ڈیمانڈ بھی زیادہ ہے جبکہ اس کے مقابلہ میں گیس کی سپلائی میں شدید کمی کا سامنا ہے جس کے باعث گیس بحران میں تیزی آئی ہے۔ صارفین گیزر کا کم سے کم جبکہ گیس ہیٹر کا استعمال نہ کریں اور گرم کپڑوں کا استعمال کریں تاکہ گھریلو صارفین کو کھانے تیار کرنے کے لئے گیس حاصل ہوسکے۔

 گیس بحران

مزید : صفحہ آخر