لاہور چڑیا گھر ممالیہ جانوروں کے حوالے سے پہلے نمبر پر ہے :خالد عیاض

لاہور چڑیا گھر ممالیہ جانوروں کے حوالے سے پہلے نمبر پر ہے :خالد عیاض

لاہور (لیڈی رپورٹر ) ڈائریکٹر جنرل جنگلی حیات و پارکس پنجاب خالدعیاض خان نے کہا ہے کہ صوبہ کے چاروں چڑیا گھروں اور 14 وائلڈلائف پارکس میں 6268 ممالیہ، پرندے اور رینگنے والے جانور موجود ہیں جن میں 45 اقسام کے 1350 ممالیہ جانور، 95 اقسام کے 4828 پرندے اور 11 اقسام کے 90 رینگنے والے جانور(Reptile) شامل ہیں۔ ممالیہ اور رینگنے والے جانوروں کی تعداد میں لاہور چڑیا گھر جبکہ پرندوں کی تعداد میں بہاولپور چڑیا گھر کو دیگر تمام چڑیا گھروں اور پارکس پر فوقیت حا صل ہے۔ انہوں نے یہ بات اپنے دفتر میں ملاقات کے لئے آنے والے الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے بتائی ۔ انہوں نے کہا کہ جانوروں اور پرندوں کی بریڈنگ اور اموات کے باعث ان کی تعداد میں کمی و اضافہ ہوتا رہتا ہے۔انہوں نے کہا کہ صوبہ بھر کے تمام چڑیا گھروں اور وائلڈ لائف پارکس کے انچارج صاحبان کو اپنے سرپلس سٹاک بارے رپورٹ پیش کرنے کی ہدایات دے دی گئی ہیں تاکہ سرپلس جانوروں اور پرندوں کو ایسے پارکس اور چڑیا گھروں میں شفٹ کیا جا سکے جہاں جانوروں و پرندوں کی یہ اقسام موجود نہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ انچارج صاحبان کو ان کے متعلقہ وائلڈ لائف پارکس اور چڑیا گھروں میں موجود انکلوثرز کی تعداد اور یہاں جانور و پرندے رکھنے کی استعداد بارے رپورٹ پیش کرنے کی بھی ہدائت کی گئی ہے تاکہ ان انکلوثرز کے خالی ہونے کی صورت میں دیگر پارکس سے جانوروں کو یہاں منتقل کیا جا سکے ۔ خالدعیاض خان نے بتایا کہ محکمہ سائنسی بنیادوں پر جانوروں و پرندوں کی صحت مندنسل کے حصول اور بڑھوتری کی کوششوں میں مصروف ہے اور اس ضمن میں جانوروں و پرندوں کو نسل در نسل آپسی اختلاط سے پیدا ہونے والی پیچیدگیوں سے محفوظ رکھنے کے لئے مختلف نر یا مادہ کو ایکسچینج پروگرام کے تحت ایک پارک یا چڑیا گھر سے دوسرے پارک یا چڑیا گھر منتقل کر رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جانوروں و پرندوں کے ڈی این اے کے تجزیے کروانے کے بارے میں بھی غور کیا جا رہا ہے تاکہ اس بات کا پتہ چلایا جا سکے کہ جانوروں و پرندوں کے آپسی اختلاط کے لئے کس جانور کی کہاں ضرورت ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1