یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کی تعیناتی کیلئے کوئی طریقہ کار طے نہیں ہوا: ہائیکورٹ

یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز کی تعیناتی کیلئے کوئی طریقہ کار طے نہیں ہوا: ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بنچ نے جامع پنجاب سمیت 4 یونیورسٹیز کے وائس چانسکرز کی تعنیاتی کے معاملے پر تعجب اظہار کیا کہ و ائس چانسلر لگانے کے لئے کوئی سٹینڈرڈ موجود نہیں ہے۔ بنچ کے سربراہ چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے ریمارکس دیئے کہ سرچ کمیٹی کے نوٹیفکیشن میں وائس چانسلر لگانے کے لئے کوئی طریقہ کار نہیں لکھا۔ مجاہد کامران کے وکیل نے استدعا کی پنجاب یونیورسٹی کے وائس چانسلر مجاہد کامران کونیا سسٹم بننے تک کام کرنے کی اجازت دی جائے۔ اس پر بنچ نے بارود کرایا کہ فیصلہ تبدیل نہں کر سکتے ۔ بنچ نے ریمارکس دیئے کہ غیر قانونی طریقے سے کسی کو کام کرنے کی اجازت نہیں دے سکتے۔جس پر وکیل کا کہنا تھا کہ یونیورسٹی ایکٹ 2012کے تحت عمر کی حد بڑھا دی گئی ہے اور اسی ایکٹ کے ان کی داد رسی کی جائے۔ بنچ نے قرار دیا کہ مجاہد کامران قائم مقام وائس چانسلر تھے کسی بھی وقت ان کو ہٹایا جا سکتا تھا۔ بنچ نے نشاندہی کی کہ مجاہد کامران کا نام سرچ کمیٹی نے بھی نہیں دیا. وکلاء کے دلائل جاری تھے تاہم سماعت کل تک ملتوی کردی گئی۔

کوئی طریقہ کار

مزید : صفحہ آخر