امریکہ کی صدارت سنبھالنے کے موقع پر ٹرمپ کے لئے ایٹم بم کا ’تحفہ‘

امریکہ کی صدارت سنبھالنے کے موقع پر ٹرمپ کے لئے ایٹم بم کا ’تحفہ‘
امریکہ کی صدارت سنبھالنے کے موقع پر ٹرمپ کے لئے ایٹم بم کا ’تحفہ‘

  

پیانگ یانگ(مانیٹرنگ ڈیسک) شمالی کوریا کی طرف سے نومنتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے عہدہ سنبھالنے کے روز بین البراعظمی ایٹمی میزائل کا تجربہ کرنے کی دھمکی دی جا چکی ہے۔ اب شمالی کوریا نے اس دھمکی پر عملدرآمد کی تیاری شروع کر دی ہے اوربرطانوی اخبار ڈیلی سٹار کے مطابق فوجی ذرائع نے تصدیق کر دی ہے کہ شمالی کورین فوج نے میزائل کے مختلف پارٹس ایک جگہ اکٹھے کرکے انہیں اسمبل کرنا شروع کر دیا ہے، جسے وہ ممکنہ طور پر ڈونلڈ ٹرمپ کے عہدہ سنبھالنے کے دن فائر کر دے گی۔اس انکشاف نے امریکی انتظامیہ کی نیندیں اڑا دی ہیں۔

وہ جدید ترین ہتھیار جس کی تیاری پر امریکہ نے 400 ارب ڈالر خرچ کر ڈالے، اب جب استعمال کرنا شروع کیا تو ایسی خامی سامنے آگئی کہ سارا پیسہ ہی ضائع ہوگیا

رپورٹ کے مطابق عینی شاہدین نے بھی تصدیق کی ہے کہ انہوں نے بین البراعظمی میزائل کے مختلف پارٹس کی نقل و حمل دیکھی ہے۔ یہ پارٹس شمالی کوریا کے بارڈر کے قریب سے گزار کر کسی مقام پر لیجائے جا رہے تھے۔ فوجی ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ پارٹس کسی بھی روایتی میزائل کے نہیں لگتے ۔ ان کی لمبائی اور شکل بالکل مختلف تھی جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ واقعی بین البراعظمی میزائل کے پارٹس ہیں۔ حربی ماہرین کا بھی کہنا ہے کہ کم جونگ ان کی امریکہ تک مار کرنے والا ایٹمی میزائل فائر کرنے کی دھمکی حقیقت ہے اور لگتا ہے کہ وہ واقعی اس پر عملدرآمد کرنے جا رہے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی