بداخلاقی کیسز ملٹری کورٹ میں منتقل کرنا چاہئے،عائشہ گلالئی

بداخلاقی کیسز ملٹری کورٹ میں منتقل کرنا چاہئے،عائشہ گلالئی

مردان(بیورورپورٹ)رکن قومی اسمبلی عائشہ گلالئی نے کہا ہے کہ مردان کے چارسالہ آسماء،قصور کے زینب،مشال خان اور شریفہ بی بی کی ساتھ بداخلاقی کا کیس ملٹری کورٹ میں منتقل کرنا چاہئے تاکہ ملزمان کو جلد ازجلدعبرت ناک سزادیا جائے خیبرپختونخواکی مثالی پولیس مردان کی چارسالہ کمسن بچی سیبداخلاقی کرنے اورانہیں بیدردی سے قتل کرنے والے ملزمان کی گرفتاری میں بُری طرح ناکام ہوچکے ہیں جوکہ حکومت کی انصاف کی دعویداری کاپول کھل گئی ہے جبکہ چائیلڈ پروٹیکشن یونٹ کو فعال کرکے ان میں اصلاحات لاناچائیے تاکہ اس قسم واقعات کو روک سکیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے گوجر گڑھی کے علاقے میں چار سالہ بچی آسماء کے ساتھ بداخلاقی اور بیدردی سے قتل کرنے پر انکے اہلخانہ کے ساتھ تعزیت کے بعد مردان پریس کلب میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا پر انکی ایک ویڈیو جو عمران خان کے حوالے تھا پی ٹی آئی کے خانہ بدوشو نے ایڈٹ کردیا ہے جس سے میرے بارے میں غلط تاثردیا جارہاے ہے جو کہ اصلی ویڈو نہیں ہے انہوں نے کہا کہ عمران خان کی پارلیمنٹ پر لعنت کہنے کی شدیدمذمت کرتی ہوں کیونکہ عمران خان اسی پارلیمنٹ کا حصہ ہے او بغیر پارلیمنٹ آئے مفت کی تنخواہ بھی صول کرتا ہے اور آئندہ بھی پارلیمنٹ آنے کیلئے الیکشن لڑیں گے اُنہوں نے کہا کہ ملک میں جاری کرپشن کیکیس کو بھی ملٹری کورٹس بھیجنا چاہئیے تاکہ غریبوں کا لوٹا ہوا پیسہ واپس آسکیں انہوں نے بعد ازاں گوجرگڑھی میں متاثرہ خاندان سے تعزیت کی او انہیں ہرقسم تعاون کا یقین دلایا۔

مزید : کراچی صفحہ اول