شانگلہ ،مختلف علاقوں میں صفائی ستھرائی کی میونسپل سروسز معطل

شانگلہ ،مختلف علاقوں میں صفائی ستھرائی کی میونسپل سروسز معطل

الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر)شانگلہ کے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر الپوری ، بشام ، کروڑہ ،چکیسر ، پورن، شاہ پور، اولندر ،لیلونئی سمیت دیگر علاقوں میں صفائی ستھرائی کے میونسپل سروسزمعطل - بازارے گندگی کے ڈھیر میں تبدیل ہوگئے- بازاروں میں جگہ جگہ گندگی نے نظام زندگی کو متاثر کردیاہے- ضلع انتظامیہ خاموش تماشائی کا کردارادا کررہی ہے انتظامیہ افیسران اپنے دفاتر میں بیٹھ کر صفائی کا حکم جاری کرتے ہیں جبکہ بازاروں میں گندگی کے ڈھیر جوں کے توں پڑے ہیں- صفائی کے ساتھ ساتھ باولے کتے بھی میدان میں آگئے ،اکثر علاقوں میں پالتو کتوں کا بھرمار - عوام پریشان-میونسپل کمیٹی کی جانب سے اب تک پالتو کتوں کے خلاف صحیح اپریشن نہیں کیا گیا -بلدیاتی نظام کے بعد ویلج کونسل ناظمین کوصفائی ستھرائی کا فنڈ ملنے کے باوجودعلاقوں میں گندگی کا ڈھیر لگا ہوا ہے ۔عوامی حلقوں میں شدید تشویش کی لہر دوڑ گئی ۔ بلدیاتی نظام نیچلی سطح پر مسائل حل کرنے میں ناکام ہوچکا ہے،علاقوں میں صفائی ستھرائی نہ ہونے سے بیماری پھیلنے کا خطرہ۔ بازاروں میں موجود سیوریج کو صاف کیا جائے- وزیراعلی خیبر پختونخوا پرویز خٹک ۔ صوبائی حکومت۔کمشنر ملاکنڈ ڈویژن صورت حال کا نوٹس لیں۔ شانگلہ کے تمام چھوٹے بڑے بازاروں میں مونسپل سروس مفلوج ہو گیا ہے تمام بازاروں میں گندگی کی ڈھیر پڑے ہے ۔تحصیل میونسپل الپور ی نے صفائی ستھرائی کیلئے رکھے گئے تمام ملازمین کو فارغ کردیا ہے اور صفائی کاعمل مقامی ویلج کونسلوں کو حوالہ کردیا گیا ہے اور اس مقامی کونسلوں کو صفائی کے لئے سالانہ فنڈ دیا جاتا ہے ،ناظمین فنڈ کے لگانے میں ناکام جس کی وجہ سے صفائی نہیں ہورہی ہے- دوسری جانب شانگلہ میں ویلیج کونسلوں کی صفائی کے ٹھیکے بھی سرکاری ملازمین کو دی گئی ہے - اس حوالے سے مونسپل حکام سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ بلدیاتی نظام کے تحت علاقوں ویلج کونسلوں کے صفائی ستھرائی کیلئے فنڈ بلدیاتی ویلج کونسل ناظمین کو دیا گیا ہے اب ان کی ذمہ داری ہے کہ وہ صفائی ستھرائی کا بندوبست کریں - تمام ویلج کونسلوں کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ تمام گندگی ایک مخصوص جگہہ پر جمع کردیں تاکہ مونسپل والے اُٹھا سکے ۔عوامی حلقوں نے صفائی کے غیر صورت حال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعلی خیبر پختونخوا پرویز خٹک ۔ صوبائی حکومت۔کمشنر ملاکنڈ ڈویژن سے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر