خیبر پختونخواہ میں آٹے کا بحران شدت اختیار کر گیا،حاجی اکرم شاہ

خیبر پختونخواہ میں آٹے کا بحران شدت اختیار کر گیا،حاجی اکرم شاہ

  



نوشہرہ (بیورورپورٹ) خیبر پختونخواہ میں آٹے کا بحران شدت اختیار کر گیا صوبے میں بحران دیکھ کر محکمہ خوراک، فلور ملز مالکان اور ضلعی انتظامیہ کی ملی بھگت سے سرکاری کوٹے ناقص آٹا خودگاڑیوں میں شہرہ کے مختلف شاہراہوں میں تقسیم کرکے اٹے کی ضرورت مندوں کے بجائے آٹا غیر ضرورت مند افراد کو دیکر اٹا ڈیلروں کی حق تلفی کرکے ان کے بے روزگار کرنے پر تلے ہوئے ہیں وزیر اعظم نے اٹا بحران کو منیٹر کرنے اور اس پر قابو پانے کے لیے بختیار خسرو اور جہانگیر ترین کو ذمہ داریاں سونپ کر ایسا ہے جیسے بلی کو چیچڑوں کی چو کیداری کرنا تین ماہ قبل آٹا ڈیلر ایسویسی ایشن نوشہرہ نے حکومت وقت کو خیبر پختون خوا میں انے والے آٹے بحران سے خبردار کیا تھا لیکن وہ ٹھس سے مس نہیں ہوئے حکومت پنجاب کی طرف سے جی ٹی روڈاور موٹر وے کے ٹول پلازوں پر محکمہ خوراک پنجاب کی غیر قانونی چیک پوسٹوں کو کسی طور نہیں مانتے کیا خیبر پختون خوا پاکستان کا حصہ نہیں محکمہ خوراک پنجاب کی طرف سے جگہ جگہ ناکے اٹھارویں ترمیم کی کھلم کھلا خلاف ورزیاں ہے حکمر ان طبقہ ہوش کے ناخن لیں کہیں ایسا تو نہیں موجودہ حکمرانوں نے اٹے کے نام پاکستان کی تقسیم کا ٹھیکہ لیا ہوا ہے ان خیالات اظہار آ ٹا ڈیلر ایسوسی ایشن نوشہرہ کے صدر حاجی اکرام شاہ نے دیگر رہنماؤں حاجی مجید اللہ، حاجی عبداللہ، حاجی آصف، اجمل شاہ، زبیر علی، الیاس، حضرت آمین، عابد الٰہی، عرفان، قدیم نے نوشہرہ پریس کلب میں مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا پریس کانفرنس کے مقررین نے کہا کہ موجودہ حکومت نے تبدیلی کا جو نعرہ لگایا تھا ہمیں ایسی تبدیلی نہیں چاہیے ہمیں ایک پاکستان کی ضرورت ہے حکمرانوں کی اس حرکت سے پاکستان تقسیم ہوتا جا رہاہے انہوں نے کہا کہ ضلع نوشہرہ میں محکمہ خوراک فلوملز مالکان، اور انتظامیہ کی ملی بھگت سے غیر معیاری آٹا ضلع کے مختلف شاہراہوں پر تقسیم کی جارہی ہے جو نہ صرف عوام کی تذلیل ہے بلکہ آٹا ڈیلروں کو بھی بے روزگارکرنے کی ایک سازش ہے انہوں نے مزید کہا کہ آخر آٹا ڈیلر اپنے لائسنس کی تجدید کی ہزاروں روپے فیس اور سالانہ لاکھوں روپے ٹیکسز اس لیے ادا کررہے ہیں کہ حکومت ان سے روزگار چھین لے،انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت پنجاب حکومت کی طرف سے سوجی،معیدہ، فائن آٹا کی ترسیل سے فور ی پابندی اٹھائیں کیونکہ خیبر پختو خوا کے عوام پہلے سے ہی بے روزگاری کی چکی میں پھیس رہے ہیں اور رہی سہی کثر تبدیلی کی دعویدار حکومت پوری کررہے ہیں ایسا نہ ہو کے آٹا کا مصنوعی بحران اصل بحران کی صورت میں شد ت اختیار کر جائے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر