" نومبر اور دسمبر میں لوگ زیادہ روٹی کھاتے ہیں" شیخ رشید نے آٹا بحران کی حیران کن منطق پیش کردی

" نومبر اور دسمبر میں لوگ زیادہ روٹی کھاتے ہیں" شیخ رشید نے آٹا بحران کی حیران ...

  



لاہور (ویب ڈیسک) وزیراطلاعات خیبرپختونخوا شوکت یوسفزئی کے بعد وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید آٹے بحران کی دلچسپ وجہ ڈھونڈ لائے۔

پریس کانفرنس کےد وران شیخ رشید سے صحافی نے ملک میں جاری آٹے بحران پر سوال کیا۔سوال پر وزیر ریلوے نے جواب دیا کہ" نومبر اور دسمبر وچ لوگ زیادہ روٹی کھاندے نے(نومبر، دسمبر میں لوگ زیادہ روٹیاں کھاتے ہیں)اس پر صحافیوں نے قہقہ مارا تو شیخ رشید پھر بولے" مذاق نئیں کرریا" (مذاق نہیں کررہا)، یہ ایک سٹڈی ہے۔

انہوں دوران گفتگو اعتراف کیا کہ آٹا مہنگا ہے، گیس اور بجلی بھی مہنگی ہے، میں ان وزیروں میں سے نہیں جو کہیں کہ ملک میں مہنگائی نہیں ہے، فروری اور مارچ حکومت کے لیے مشکل اور اونچ نیچ کے مہینے ہیں، عمران خان کی حکومت کو مزید ڈیڑھ سال کا وقت دیں۔

واضح رہے کہ ملک کے مختلف شہروں میں آٹے کا بحران برقرار ہے، جس کے باعث شہری مہنگے داموں آٹا خریدنے پر مجبور ہیں۔کراچی میں سرکاری قیمت سے 20 روپے زیادہ قیمت پر آٹا فروخت کیا جارہا ہے، گوجرانوالہ اور ملتان میں آٹے کی قلت پیدا ہوگئی ہے جبکہ سکھر میں بھی شہری 65 روپے کلو آٹا خریدنے پر مجبور ہیں۔

آٹا مہنگا ہونے کی وجہ سے پشاور میں نان بائی ایسوسی ایشن نے پیر سے ہڑتال کا اعلان کیا۔ایسوسی ایشن نے روٹی 10 روپے میں فروخت کرنے کا مطالبہ اور رعایتی قیمت پر گندم فراہم کرنے کی پیشکش مسترد کردی، ایسوسی ایشن کا موقف ہے کہ لال آٹا خیبر پختونخوا میں استعمال نہیں کیا جاتا۔

مزید : قومی