نوجوان لڑکی کا مجسٹریٹ پر مبینہ زیادتی کا الزام، چیمبر میں کیا ہوا تھا ؟ لڑکی نے ویڈیو بیان ریکارڈ کروا دیا

نوجوان لڑکی کا مجسٹریٹ پر مبینہ زیادتی کا الزام، چیمبر میں کیا ہوا تھا ؟ لڑکی ...
نوجوان لڑکی کا مجسٹریٹ پر مبینہ زیادتی کا الزام، چیمبر میں کیا ہوا تھا ؟ لڑکی نے ویڈیو بیان ریکارڈ کروا دیا

  



کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن )سیہون میں مجسٹریٹ امیتاز حسین بھٹو پر مبینہ زیادتی کا الزام عائد کرنے والی 18 سالہ سلمیٰ بروہی نے اپنا ویڈیو بیان ریکارڈ کروا دیاہے ۔

شہدا د کوٹ سے تعلق رکھنے والے سلمیٰ بروہی اور نثار بروہی پسند کی شادی کرنے کیلئے گھر سے فرار ہوئے تھے اور انہوں نے سیہون میں ایک گیسٹ ہاﺅس میں رہائش اختیار کی تھی جہاں 13 جنوری کو لڑکی کے اہل خانہ نے انہیں پکڑ لیا ۔معاملہ پولیس تک جا پہنچا تو پولیس لڑکی کو بیان کے لیے سینئر جوڈیشل مجسٹریٹ امتیاز بھٹو کے چیمبر میں لے گئی ۔ جہاں لڑکی نے جج کی جانب سے مبینہ زیادتی کا نشانہ بنائے جانے کا الزام عائد کیا ۔سلمیٰ بروہی کی شکایت پر سیہون پولیس نے ان کا عبداللہ شاہ انسٹی ٹیوٹ میں طبی معائنہ کرایا جہاں لڑکی کے ساتھ زیادتی کی تصدیق ہو گئی۔بعدازاں چیف جسٹس سندھ ہائیکورٹ احمد علی شیخ نے جوڈیشل مجسٹریٹ امتیاز حسین بھٹو کو معطل کر دیا اور انہیں سندھ ہائیکورٹ میں رپورٹ کرنے کی ہدایت کی۔اب سلمیٰ بروہی نے پولیس کو اپنا ویڈیو بیان ریکارڈ کراتے ہوئے بتایا کہ شوہر اور وکیل کے ساتھ عدالت گئی تو جج نے دونوں کو کمرے سے نکال دیا۔سلمیٰ بروہی نے بتایا کہ جج نے اپنے کمرے میں پوچھا کہ والدین کے ساتھ رہنا چاہتی ہو یا شوہر کے ساتھ؟ جج کو بتایا کہ شوہر کے ساتھ رہنا چاہتی ہوں، اس پر جج نے مجھے زیادتی کا نشانہ بنایا اور کہا کہ شوہر کے پاس جانے کا یہی راستہ ہے۔

مزید : قومی