انگلینڈ اور ویلز کی آبادی میں 3.7ملین کا اضافہ ہوا‘ رپورٹ

انگلینڈ اور ویلز کی آبادی میں 3.7ملین کا اضافہ ہوا‘ رپورٹ

  

لندن(جی این آئی ) انگلینڈ اور ویلز کی آبادی میں امیگریشن، شرح پیدائش اور اوسط عمر بڑھنے کی وجہ سے غیر معمولی اضافہ ہوا ہے۔گزشتہ دس سال میں انگلینڈ اور ویلز کی آبادی 3.7 ملین(7.1 فیصد) بڑھ گئی۔ 2001 میں انگلینڈ اور ویلز کی آبادی52.4 ملین تھی جو گزشتہ سال بڑھ کر 56.1 ملین تک پہنچ گئی ۔آفس آف دی نیشنل سٹیٹسٹکس کے اعداد و شمار کے مطابق 2011 کی مردم شماری رپورٹ میں بتایا گیا کہ آبادی میں 55 فیصد یا 2.1 ملین کا اضافہ خالص مائیگریشن کی وجہ سے تھا 45 فیصد یا 1.6 ملین کا اضافہ اوسط عمر میں اضافے کی وجہ سے ہوا انگلینڈ اس مدت میں یورپی یونین میں پانچواں تیزی سے آبادی میں اضافے والا خطہ تھا ہر چھ میں سے ایک شخص کی عمر 65 سال یا اس سے زیادہ ہے ان میں سے 430,000 افراد 90 سال سے زیادہ عمر کے ہیں 20-29 سال عمر کے گروپ کی آبادی میں بھی اضافہ ہوا جب کہ پانچ سال سے کم عمر کے بچوں کی آبادی چار لاکھ بڑھ گئی آبادی کا نصف لندن، ساﺅتھ ایسٹ اور ایسٹ آف انگلینڈ میں رہتا ہے آبادی میں سب سے زیادہ اضافہ لندن میں 12 فیصد ہوا اور 850,000 افراد بڑھ گئے جب کہ لندن کی آبادی 8 ملین تک پہنچ گئی لوکل اتھارٹی جس کی آبادی سب سے زیادہ تیزرفتاری سے بڑھی ٹاور ہیملٹس ہے جو سب سے غریب آبادی بھی ہے گزشتہ 10 سال میں اس کی آبادی 26.4 فیصد بڑھ گئی نیوہم کی آبادی 23.5 فیصد اور مانچسٹر کی آبادی 19 فیصد کی شرح سے بڑھی نادرن آئرلینڈ کی آبادی میں اضافے کی شرح 1.7 فیصد رہی اور 1,801,900 افراد بڑھ گئے۔

مزید :

عالمی منظر -