آزاد کشمیر اسمبلی کے سپیکر سردار غلام صادق ڈبل سرکاری تنخواہ لینے کے الزام میں نااہل قرار

آزاد کشمیر اسمبلی کے سپیکر سردار غلام صادق ڈبل سرکاری تنخواہ لینے کے الزام ...

مظفر آباد(اے این این) عدالت نے آزاد کشمیر کی قانون ساز اسمبلی کے انتخابات کیلئے سپیکر سردار غلام صادق کو نااہل قرار دے دیا۔آزاد کشمیر ہائی کورٹ کے ڈویژنل بینچ نے گزشتہ روز سپیکر آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی سردار غلام صادق کو نااہل قرار دے دیا ہے ۔ مسلم لیگ ن کے امیدوار سردار خان بہادر خان کی رٹ پر سینئر جج ہائی کورٹ جسٹس ایم تبسم آفتاب علوی اور جسٹس اظہر سلیم بابر پر مشتمل بینچ نے فیصلہ سنا دیا ۔ درخواست گزار کی جانب سے راجہ خالد محمود خان ایڈووکیٹ اور راحت فاروق ایڈووکیٹ جبکہ سپیکر کی جانب سے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل چوہدری شوکت عزیز اور مشتاق جنجوعہ ایڈووکیٹ نے پیروی کی ۔ درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا تھا کہ سردار غلام صادق 2006ء میں ممبر اسمبلی منتخب ہوئے ۔ 30 نومبر 2008 ء کو انہیں عبوری آئین ایکٹ 74ء کی دفعہ 21 ذیلی دفعہ 8 کی رو سے مشیر ہمراہ وزیراعظم پاکستان ؍ چیئرمین کشمیر کونسل تعینات کیا گیا اور جولائی 2011ء تک وہ اس عہدہ پر تعینات رہے اور 2 تنخواہیں حاصل کرتے رہے حالانکہ وہ ایسا نہیں کر سکتے تھے ۔ سپیکر نے یہ رقم حالیہ الیکشن شیڈول جاری ہونے اور میڈیا پر خبریں چلنے کے بعد 8 جون 2016ء کو خزانہ سرکار میں جمع کروائی جو کہ 8 سال تک ان کے اکاؤنٹ میں رہی اس طرح وہ صادق اور امین نہیں رہے ۔ سپیکر پر دوسرا الزام یہ تھا کہ انہوں نے اپنے لیٹر ہیڈ پر ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر سدھنوتی کو 12 افراد کی فہرست فراہم کی اور انہیں بطور سکول ٹیچر تعینات کرنے کا حکم دیا ۔ سپیکر نے اپنے جواب دعویٰ میں لیٹرہیڈ پر فہرست دینے اور ہدایات جاری کرنے کی تردید نہیں کی ۔ عدالت نے یہ قرار دیا کہ ان کا یہ عمل رول آف میرٹ اور عبوری آئین ایکٹ 74ء کی دفعہ 4 کی ذیلی دفعات 16 اور 17 کے مغائر تھا ۔ اس طرح عدالت نے دونوں الزامات ثابت ہونے پر ریٹرننگ آفیسر سدھنوتی اور چیف الیکشن کمشنر کے احکامات کو کالعدم قرار دیتے ہوئے سردار غلام صادق کو نااہل اور ان کے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے کا حکم دے دیا ۔

سردار غلام صادق

مزید : کراچی صفحہ اول