چیئرمین ایف بی آر کاٹن‘ کھل بنولہ پر ٹیکس ختم کرنے کیلئے راضی

چیئرمین ایف بی آر کاٹن‘ کھل بنولہ پر ٹیکس ختم کرنے کیلئے راضی

  



ملتان (نیوز رپورٹر) فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے چیئرمین شبر زیدی نے کاٹن پر 10فیصد سیلز ٹیکس اور کھل پر 5فیصد ٹیکس ختم کرنے پر آمادگی ظاہر کردی ہے۔ ملک بھر کے چیف کمشنرز کو سیلز ٹیکس کی وصولی کے نوٹسز جاری نہ کرنے کی ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔ پاکستان(بقیہ نمبر42صفحہ12پر)

کاٹن جنرز ایسوسی ایشن (پی سی جی اے) کے سابق چیئرمینوں حاجی محمد اکرم‘ سہیل محمود ہرل‘ ڈاکٹر جسومل پر مشتمل وفد نے جمعرات کے روز چیئرمین ایف بی آر سے ملاقات کی۔ ملاقات میں آل پاکستان ملز ایسوسی ایشن (ایپوما) کے چیئرمین خواجہ محمد فاضل‘ عنصر حق خان‘ محمد طارق‘ اسامہ طارق بھی موجود تھے۔ پی سی جی اے وفد نے چیئرمین ایف بی آر کو ٹیکسوں کے نفاذ اور ان سے مرتب ہونے وا لے منفی اثرات کے بارے میں آگاہ کیا اور بتایا کہ ڈائریکٹ‘ ان ڈائریکٹ ٹیکسیشن سے کاشتکار براہ راست متاثر ہوں گے۔ اینمل فیڈز‘ جانوروں کی کسی اور خوراک پر ٹیکس نہیں ہے۔کاٹن‘ کھل (Oil Cake) پر ٹیکسوں کے نفاذ سے کاشتکار براہ راست متاثر ہوں گے۔ کاٹن پر سیلز ٹیکس کے نفاذ سے کاٹن مارکیٹ ہی نہیں پوری کاٹن اکانومی متاثر ہوگی۔ ملکی معیشت میں کاٹن کو ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت حاصل ہے۔ ملکی آئل ملز‘ آئل انڈسٹری متاثرہونے سے امپورٹ بل میں اضافہ ہوگا۔ اربوں ڈالر کی کاٹن امپورٹ سے معیشت پہلے ہی بوجھ تلے دبی ہوئی ہے۔ آئل امپورٹ اور کاٹن امپورٹ تجارتی خسارہ میں اضافے کا سبب ہے۔ ملک کی 24ارب ڈالر کی مجموعی ایکسپورٹ میں ٹیکسٹائل سیکٹر کا حصہ 14ارب ڈالر ہے جو کاٹن پر مشتمل ہے۔ پی سی جی اے نے کاٹن جننگ و آئل سیکٹر کا مسئلہ حل کروانے پر جہانگیر ترین‘ کسان اتحاد کے چیئرمین خالد محمود کھوکھر‘ سابق چیئرمین پی سی جی اے شہزاد علی خان‘ وائس چیئرمین مہر محمد اشرف‘ سابق وائس چیئرمین عاصم سعید شیخ کی خدمات اور کاوشوں کو خراج تحسین پیش کیا ہے۔

کاٹن، کھل

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...