ماضی کی حکومتوں میں تعلیم کے ساتھ مذاق کیا گیا: مشتاق غنی

  ماضی کی حکومتوں میں تعلیم کے ساتھ مذاق کیا گیا: مشتاق غنی

  

پشاور) پاکستان نیوز (سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی نے کہا ہے کہ ماضی کی حکو متو ں میں تعلیم کے ساتھ مذاق کیا گیاوزیر اعظم عمران خان کا پہلے دن سے ہی یہ وژن تھا کہ ترقی یافتہ ممالک کی صف میں شامل ہونے کے لئے تعلیمی میدان میں ترقی ناگزیر ہے، میں نے اپنے گزشتہ پا نچ سا لہ دور حکو مت میں صو بہ خیبر پختو نخوا میں دس یونیورسٹیاں، ہری پور،ایبٹ آباد اور مانسہرہ سمیت پور ے صو بے میں 100کالجو ں میں بی ایس پروگرا م کا اجراء کیا جبکہ اس سا ل مزید 34کا لجو ں میں بی ایس پروگرا م کا اجراء کیا جا رہا ہے۔ ہری پور،ایبٹ آباد اور مانسہرہ کو سائنس بلاک دئیے،ایبٹ آباد میں خوا تین کے لئے صو بے کا دوسرا کا لج آف ہو م اکنا مکس کے قیا م اور پرو فیسرز کے سکیل اپ گریڈیشن جیسے کا م کئے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہفتہ کے روز پوسٹ گریجویٹ کالج منڈیاں ایبٹ آبادمیں 6کروڑو رو پے کی لا گت سے تعمیر ہو نے وا لے بی ایس سائنس بلاک کا افتتا ح اور افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع چیئرمین قائمہ کمیٹی برائے ٹیکنالوجی رکن قومی اسمبلی علی خان جدون،پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر اظہر،پروفیسر دلاور، اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔اس موقع پر ڈپٹی ڈائریکٹر ہائر ایجوکیشن پروفیسر منیر احمد سواتی،سابق چیئرمین ایبٹ آباد بورڈ پروفیسر سجاد خان، پروفیسر غلام رسول،پروفیسر مشتاق احمد،پروفیسر جمیل اختر کے علاوہ دیگر موجود تھے۔مشتا ق احمد غنی نے کہا کہ پروفیسرز کے گریڈ کو بڑھانے میں مشکلات کے باوجود اپنے وعدے کو پورا کیا۔انہوں نے کہا کہ بی ایس پروگرام میں پنجاب حکو مت ناکام ہو گئی تھی خیبر پختونخوا میں سو کالج میں اس پرو گرا م کو شروع کیا اور 34کالجو ں میں اس سا ل یہ پرو گرا م شروع کر رہے ہیں کیونکہ اس میں تحقیق کے ساتھ ساتھ طلبہ کو آگے بڑھنے کے مواقع ملتے ہیں۔انہوں نے پوسٹ گریجویٹ کالج منڈیاں کی تعلیمی کارکردگی کو سراہا۔ انہو ں نے کہا کہ حکومت کی بھر پور کوشش ہے کہ وہ جدید تعلیم کی فراہمی کو ممکن بنائے۔انہوں نے کالج میں عملہ کی کمی اور کالج کے کانفرنس ہال کی تعمیر کے لئے فنڈ فراہم کر نے اور کالج کے لئے بس دینے کا علان کیا اور کہا کہ60لا کھ رو پے کی لا گت سے کا لج کی چار دیواری پر کا م جا ری ہے جو جلد مکمل ہو جا ئے گا۔رکن قومی اسمبلی علی خان جدون نے اپنے خطاب میں کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت نے تعلیم کی ترقی کو ترجیحات میں رکھاترقی صرف عمارتوں اور سڑکوں کی تعمیر کا نام نہیں، فخر محسوس ہوتا ہے کہ تحریک انصاف نے تعلیم کے میدان میں بڑے فیصلے کئے اور گزشتہ حکومت میں ایبٹ آباد میں مشتاق غنی نے تعلیمی اداروں کی کمی کو پورا کرنے کے لئے بے پناہ کام کیا جو پچھلے تیس سال میں نہیں ہوا۔انہوں نے کالج کی آئی ٹی لیب سمیت دیگر ضروریات کو پورا کرنے کی یقین دہانی کرائی۔قبل ازیں پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر اظہر محمود نے کالج کی کارکردگی کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ کالج نے 26 ریسرچ ایوارڈ حاصل کئے ہیں،کالج نے صوبہ میں پہلی پوزیشن حاصل کی اور ہم نصابی گرمیوں میں بھی نمایاں کار کر دگی دکھا ئی۔ قومی اور انٹرنیشنل کانفرنس میں پہلی اور دوسری پوزیشن حاصل کی۔انہوں نے سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ انفراسٹرکچر کی کمی پوری ہونے سے تعلیمی مشکلات کم ہونگی جس کے مستقبل میں مثبت اثرات مرتب ہونگے۔انہوں نے کالج میں عملہ کی کمی پوری کرنے پر بھی توجہ دلائی۔اساتذہ سمیت دیگر ملازمین کی کمی پوری ہونے سے طلبہ کو معیاری تعلیم کی فراہمی میں مددملے گی۔تقریب کے اختتام پر مختلف شعبہ میں خدمات دینے والوں کو خصوصی شیلڈز دی گئیں اور کالج کی جانب سے مہمان خصوصی کو یادگاری شیلڈز بھی دی گئیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -