اربوں کے قرضے معاف، خسارے سے بری الذمہ قرار، کے الیکٹرک اور پیپلز پارٹی کا "خفیہ" معاہدہ سامنے آگیا

اربوں کے قرضے معاف، خسارے سے بری الذمہ قرار، کے الیکٹرک اور پیپلز پارٹی کا ...
اربوں کے قرضے معاف، خسارے سے بری الذمہ قرار، کے الیکٹرک اور پیپلز پارٹی کا

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کے سب سے بڑے شہر کو بجلی فراہم کرنے کی ذمہ دار کمپنی کے الیکٹرک نے جہاں عوام کی ناک میں دم کر رکھا ہے وہیں اب اس کمپنی کا پی پی کی حکومت کے ساتھ ہونے والا ایسا معاہدہ منظر عام پر آگیا ہے کہ شہری حیران پریشان رہ جائیں۔

نجی ٹی وی سماء کے مطابق پیپلز پارٹی ور کے الیکٹرک میں 2009 میں معاہدہ طے پایا تھا جس کے تحت کمپنی کے 31 ارب روپے کے بقایا جات معاف کیے گئے اور کمپنی کی بینکوں کی ادائیگیوں کی ضمانت بھی حکومت نے لے لی ۔ اس کے علاوہ کمپنی کو کسی بھی قسم کے خسارے سے بری الذمہ قرار دیا گیا۔

ترمیمی معاہدے میں کمپنی کو ملکی قوانین سے متصادم آرڈر پاس کرنے کا بھی اختیار ملا۔ معاہدے میں صاف لکھا ہے کہ کمپنی درخواست دے تو ملکی قوانین سے متصادم آرڈرز کے حوالے سے حکومتی ادارے بھرپور معاونت کریں گے۔ معاہدے کے تحت کمپنی سہ ماہی رپورٹ فراہم کرنے کی پابند تھی۔

کے الیکٹرک اور پیپلز پارٹی حکومت کے درمیان 2009 میں ہونے والے معاہدے کے تحت کمپنی کو نیشنل گرڈ سے 650 میگاواٹ اضافی بجلی فراہم کرنے کی شق شامل کی گئی جو آج بڑھ کر 850 میگا واٹ ہوچکی ہے۔ ترمیمی معاہدے پر اُس وقت کے سیکریٹری پاور اور سی ای او کےالیکٹرک کے دستخط موجود ہیں۔

مزید :

علاقائی -سندھ -کراچی -