وہ وقت جب برٹش ایئرویز کے طیارے کو کویت میں یرغمال بنالیاگیا تھا لیکن جنگ کے دوران اسے کیوں اتارا گیا؟ تین دہائیوں بعد تہلکہ خیز انکشاف

وہ وقت جب برٹش ایئرویز کے طیارے کو کویت میں یرغمال بنالیاگیا تھا لیکن جنگ کے ...
وہ وقت جب برٹش ایئرویز کے طیارے کو کویت میں یرغمال بنالیاگیا تھا لیکن جنگ کے دوران اسے کیوں اتارا گیا؟ تین دہائیوں بعد تہلکہ خیز انکشاف

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) 1990ءمیں ہونے والی عراق کویت جنگ کے دوران عراقی فوج نے برٹش ایئرویز کی ایک پرواز کو کویت میں یرغمال بنا لیا تھا اور اس میں سوار مسافروں کو 5ماہ تک قید رکھنے کے بعد رہا کیا گیا تھا۔ اب اس حوالے سے تہلکہ خیز انکشاف منظرعام پر آ گیا ہے کہ اس پرواز کو جنگ کے دوران برطانوی حکومت کی طرف سے کویت سٹی میں اترنے کو کہا گیا تھا کیونکہ جہاز میں برطانوی فوج کا ایک خفیہ خصوصی دستہ تھا جسے اس جنگ زدہ علاقے میں اترنا تھا۔

 میل آن لائن کے مطابق یہ برٹش ایئرویز کی پرواز149تھی، جسے لندن کے ہیتھرو ایئرپورٹ سے روانہ ہو کر بھارت سے ہوتے ہوئے ملائیشیاءکے دارالحکومت کوالالمپور پہنچنا تھا۔ یکم اگست 1990ءکو لندن سے روانہ ہونے والی اس پرواز میں عملے کے اراکین کے علاوہ 367مسافر سوار تھے۔

جب مسافروں کو علم ہوا کہ پرواز کو کویت سٹی میں بھی کچھ دیر کے لیے رکنا ہے، تو وہ شدید ذہنی دباﺅ کا شکار ہو گئے کیونکہ اس وقت کویت اور عراق کی جنگ عروج پر تھی۔ پائلٹ کلیو ارتھی کی جانب سے سپیکر پر مسافروں سے کہا گیا ہے کہ ”ہمیں حکومت کی طرف سے یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ کویت سٹی میں اترنا بالکل محفوظ ہے۔ اگر راستے میں ہمیں اس کے برعکس کچھ معلوم ہوا تو ہم پرواز کا روٹ تبدیل بھی کر سکتے ہیں۔“ پائلٹ کی طرف سے یہ اعلان سن کر مسافر مطمئن ہو گئے۔ پرواز کے ٹیک آف سے کچھ ہی دیر قبل تاخیر کے ساتھ کچھ لوگ جہاز میں آئے۔

 ان میں ایک کویتی شاہی خاندان کی کوئی شخصیت تھی اور دوسرے 9تنو مند جوان تھے، جن کے چہرے مہرے سے لگتا تھا کہ وہ فوجی ہیں۔ یہ لوگ جہا زکے پچھلے حصے میں سیٹوں پر بیٹھ گئے جس کے بعد پرواز نے ٹیک آف کیا اور کویت سٹی آ کر اتری۔ اس کے بعد جو کچھ ہوا، وہ تاریخ کا حصہ ہے۔ سٹیفن ڈیوس نے اپنی کتاب ’آپریشن ٹروجن ہارس‘ (Operation Trojan Horse)میں انکشاف کیا ہے کہ اس پرواز کو ان فوجیوں کی وجہ سے کویت سٹی میں اترنے کی اجازت دی گئی تھی، کیونکہ برطانوی سپیشل فورسز کے اس سکواڈ کو کویت سٹی میں اترنا تھا۔ 

مزید :

برطانیہ -