ملکی حسابات جاریہ کے کھاتوں کے خسارے میں85 فیصد کمی

ملکی حسابات جاریہ کے کھاتوں کے خسارے میں85 فیصد کمی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


اسلام آباد(اے پی پی):ملکی حسابات جاریہ کے کھاتوں کے خسارے میں گزشتہ مالی سال کے دوران سالانہ بنیادوں پر 85 فیصد کی نمایاں کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔ سٹیٹ بینک کی جانب سے اس حوالے سے جاری کر دہ اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2023 میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کا خسارہ 2.55 ارب ڈالر ریکارڈکیا گیا جو مالی سال 2022 کے مقابلہ میں 85 فیصد کم ہے۔ مالی سال 2022 میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کا خسارہ 17.48 ارب ڈالر ریکارڈ کیا گیا ۔ جون میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کا خسارہ 334 ملین ڈالر ریکارڈ کیا گیا جو گزشتہ سال جون میں 2.321 ارب ڈالر تھا۔ مئی کے مقابلہ میں جون میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کے خسارہ میں ماہانہ بنیادوں پر 52 فیصد کا اضافہ ہوا ۔ مئی میں حسابات جاریہ کے کھاتوں کا خسارہ 220 ملین ڈالر ریکارڈکیاگیا جو جون میں بڑھ کر 334 ملین ڈالر ہو گیا۔ اعدادوشمار کے مطابق مالی سال 2023 میں پرائمری بیلنس 5.71 ارب ڈالر ریکارڈ کیاگیا جو مالی سال 2022 کے مقابلہ میں 9 فیصد زیادہ ہے۔ 
مالی سال 2022 میں پرائمری بیلنس 5.248 ارب ڈالر ریکارڈکیاگیا تھا۔ جون میں پرائمری بیلنس 669 ملین ڈالر ریکارڈکیاگیا جو گزشتہ سال جون کے مقابلہ میں 39 فیصد زیادہ ہے۔ گزشتہ سال جون میں پرائمری بیلنس کا حجم 481 ملین ڈالر ریکارڈکیا گیا تھا۔ مئی کے مقابلہ میں جون میں پرائمری بیلنس میں ماہانہ بنیادوں پر 22 فیصد کی نمو ہوئی ہے۔ مئی میں پرائمری بیلنس کا حجم 547 ملین ڈالر ریکارڈ کیاگیا جو جون میں بڑھ کر 669 ملین ڈالر ہو گیا۔

مزید :

کامرس -