لنڈی کوتل ، ایم ایس اور ہسپتال میں سہولیات کے فقدان کیخلاف احتجاجی دھرنا

  لنڈی کوتل ، ایم ایس اور ہسپتال میں سہولیات کے فقدان کیخلاف احتجاجی دھرنا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


       خیبر (بیورورپورٹ) لنڈیکوتل ہسپتال چوک میں قومی مسائل کمیٹی اور سماجی فلاحی تنظیموں کے کارکنان کا ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ایم ایس کے خلاف اور ہسپتال میں سہولیات کے فقدان خلاف احتجاجی دھرنا دیا ایم ایس ڈاکٹر جمشید شیرانی تبادلے تک احتجاجی دھرنا جاری رہے گا. دھرنا شرکاءکا موقف لنڈیکوتل ہسپتال چوک میں احتجاجی دھرنا میں قومی مسائل کمیٹی کے مشران حاجی الیاس شینواری کلیم اللہ شینواری. سمیع اللہ آفریدی. نورضمیر شینواری اور دیگر نے کہا کہ ہسپتال میں مریضوں کے علاج معالجہ کے لئے کوئی سہولیات نہیں ہے معمولی مریضوں کو بھی ریفر کیا جاتا ہے کٹیگری اے ہسپتال میں صرف کھانسی بخار اور زکام کا علاج کیا جاتا ہے باقی مریضوں کو پشاور ریفر کیا جاتا ہے ایم ایس کرپشن میں ملوث ہیں تبدیلی کے نام عوام کو دھوکہ دیا انہوں نے کہا کہ ایم ایس نے اے آئی پی پروگرام کے تحت بھرتی ہونے والے میل نرسوں سے تنخواہوں میں 30 فیصد کٹوتی کی ہے اور صحت کارڈ اور لوکل پرچیز سالانہ بجٹ میں بے انتہاپسندی کرپشن کی ہے اس ان پر انکوائری مقرر کرکے کڑا احتساب کیا جائے مقررین نے کہا کہ آئے روز ایم ایس ڈاکٹر جمشید شیرانی کے خلاف مظاہرے پریس کانفرنس ہورہی ہے لیکن سیکرٹری ہیلتھ ڈی جی ہیلتھ ا اور محکمہ صحت حکام ٹہس سے مس نہیں ہو رہے ہیں کیا وہ بھی ایم ایس کے ساتھ شریک ہے انہوں نے دھمکی دی اگر ایم ایس کا تبادلہ نہیں کیا تو پاک افغان شاہراہ پر دھرنا دیکر بند کر دینگے اس حوالے سے ایم ایس ڈاکٹر جمشید شیرانی نے رابطے پر اپنا موقف پیش کرتے ہوئے کہا کہ عدالت کے حکم اور محکمہ صحت حکام کے احکامات پر ہسپتال میں ڈاکٹرز کی پرائیویٹ پریکٹس پر پابندی عائدکردی گئی ہیں اور لوکل سٹاف سے کوارٹرز رہائش گاہیں خالی کرنے کا حکم جاری ہوا ہے اس لئے کچھ افراد اس ہر پریشان ہوکر ائے روز احتجاج کر رہے ہیں انہوں نے کہا ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال میں عوام کو ہر وقت احتساب کے لئے تیار ہیں. انہوں اور ہسپتال میں علاج معالجہ کے لئے آئے ہوئے مریضوں کو سہولیات فراہم کرنا اولین ترجیح ہے