ترکی ، کرپشن الزامات کی تفتیش میں تین وزراکے بیٹے گرفتار

ترکی ، کرپشن الزامات کی تفتیش میں تین وزراکے بیٹے گرفتار

  

                                   استنبول(آن لائن)ترک پولیس نے رشوت ستانی اور کرپشن کے الزامات کی تفتیش کے دوران حکومتی کابینہ کے تین وزراءکے بیٹوں اور کئی بڑے کاروباری افراد کو حراست میں لے لیا ہے۔ترک شہر استنبول کے گورنر حسین اَونی متلو نے ان گرفتاریوں کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ پولیس نے ترکی کے سب سے بڑے شہر استنبول اور دارالحکومت انقرہ میں کئی مقامات پر چھاپے مار کر گرفتاریاں کی ہیں۔ گورنر متلو نے رپورٹرز سے گفتگو کرتے ہوئے پولیس ایکشن کی مزید تفصیل بتانے سے گریز کیا اور یہ کہا کہ گرفتاریاں پہلے سے جاری تفتیش کا حصہ ہے اور اِس بارے میں کوئی تبصرہ یا بیان دینا نامناسب ہو سکتا ہے۔جن وزرائ کے بیٹوں کو گرفتار کیا گیا ہے، ان میں وزیر داخلہ معَمر گولر، وزیر اقتصادیات ظفر کاگلیان اور وزیر ماحولیات ایردوآن بیرکتار شامل ہیں۔ ترک میڈیا کے مطابق استنبول اور انقرہ میں پولیس نے ایک ساتھ کئی مکانوں پر چھاپے مار کر کل 37 افراد کو حراست میں لیا۔ وزرائے داخلہ و اقتصادیات نے اپنے بیٹوں کی گرفتاریوں کے بعد اپنی سرکاری مصروفیات کو معطل کر دینے کا بھی فیصلہ کیا۔ پولیس نے تین وزرائ کے بیٹوں کے علاوہ کئی اہم تاجروں اور اعلیٰ سرکاری ملازمین کے گھروں پر بھی چھاپے مارے۔ ان میں ترک اسٹیٹ بینک (Halkbank) کے چیف ایگزیکٹو سلیمان اَسلان اور کنسٹرکشن ورلڈ کی بااثر اور بڑی کاروباری شخصیت علی آغا اوگلو بھی شامل ہیں۔ ادھر ترک تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ منگل کے روز ہونے والی گرفتاریوں سے وزیراعظم رجب طیب ایردوآن اور امریکا مقیم ترک مبلغ اور مذہبی دانشور فتح اللہ گلن کے درمیان پہلی سے پیدا کشیدگی اور تناو¿ میں مزید شدت پیدا ہو گی۔ترک اخبار حریت کے مطابق جن مشتبہ افراد کو حراست میں لیا گیا ہے، ان پر پولیس کو شبہ ہے کہ وہ کرپشن میں ملوث رہتے ہوئے رشوت ستاتی کے معاملات میں شریک ہیں۔ اخبار مزید لکھتا ہے کہ ان افراد نے رشوت کے ذریعے غیر قانونی تعمیراتی اجازت نامے بھی حاصل کیے گئے ہیں۔ مبصرین کے مطابق جلا وطن مذہبی دانشور فتع اللہ گلن کی حِزمَت تحریک اب وزیراعظم رجب طیب ایردوآن کا جہاں سردرد بنی ہے وہاں اِس نے ترکی کے مذہبی سیاسی حلقوں کے اندر پیدا ہونے والی تفریق اور خلیج کو بھی مزید واضح کر دیا ہے۔ اس تحریک کے بارے میں یہ خیال ظاہر کیا جاتا ہےکہ یہ وزیراعظم ایردوآن کی جماعت کے رہنماو¿ں کی جانب سے کی جانے والی بدعنوانی کے معاملات کو عوامی سطح پر سامنے لانے میں کردار ادا کرتی ہے۔

مزید :

عالمی منظر -