آئی ایس آئی ایس کے راز افشاں کرنے والا پر اسرار شخص

آئی ایس آئی ایس کے راز افشاں کرنے والا پر اسرار شخص
آئی ایس آئی ایس کے راز افشاں کرنے والا پر اسرار شخص
کیپشن: ISIS

  

دمشق (مانیٹرنگ ڈیسک) مشرق وسطیٰ پر کالی گھٹا کی طرح چھا جانے والے شدت پسند گروپ الدولة الاسلامی فی العراق و الشام (آئی ایس آئی ایس) کا موقف اس وقت دنیا کے کونے کونے میں پھیل چکا ہے لیکن ٹوئٹر پر ایک پراسرار اکاﺅنٹ کے ذریعے اس گروپ کے خفیہ ترین راز فاش کئے جا رہے ہیں۔ دسمبر 2013ءمیں وجود میں آنے والے اکاﺅنٹ @wikibaghdady کے ذریعے اب تک داعش کے متعلق لاتعداد راز فاش کئے جا چکے ہیں اور یہ سلسلہ بدستور جاری ہے۔ اس اکاﺅنٹ نے داعش کے لیڈر ابوبکر بغدادی کے بارے میں انکشاف کیا کہ اس کا اصل نام ابراہیم اواد ہے اور اس کی جائے پیدائش بغداد نہیں بلکہ سمارا ہے۔

ایک اور حیرت ناک انکشاف میں کہا گیا ہے کہ داعش کے اندرونی حلقے کی اصل طاقت بعث پارٹی کے ایک سابقہ رکن اور صدام حسین دور کی فوج کے کرنل کے ہاتھ میں ہے جسے حاجی بکر کہا جاتا ہے اور یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ حاجی بکر ہی وہ شخص ہے جو داعش کے سابقہ لیڈر عمر البغدادی کی 2010ءمیں تکریت میں ہلاکت کے بعد موجودہ لیڈر ابوبکر بغدادی کو سامنے لایا اور اسے اس مقام تک پہنچایا۔ دراصل اس اکاﺅنٹ کے ذریعے یہ اہم دعویٰ کیا گیا ہے کہ صدام دور کی بعث پارٹی اور داعش میں گہرا تعلق ہے اور ان کے درمیان ایک معاہدہ طے پا چکا ہے جس کے تحت بعث پارٹی کے لوگوں کو عراق کے ایک نئے حکمران اتحاد کا مالک و مختار بنایا جائے گا۔ اس سلسلے میں نقشبندی گروپ کا بھی تذکرہ کیا گیا ہے جس کے متعلق یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ یہ صدام دور کی بعث پارٹی کا نیا روپ ہے اور اس بغداد کی حکمرانی دوبارہ عطا کرنے کیلئے داعش ان کے ساتھ معاہدہ کر چکی ہے اس گروپ کے سربراہ کا نام الدوری بتایا گیا ہے۔

تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ بات قرین قیاس نہیں ہے کہ داعش نقشبندی گروپ کو عراق کا حکمران بنائے گی کیونکہ جنگ کے دوران اتحاد بنانا اور بات ہے لیکن فتح کے بعد طاقت دوسرے گروپ کے حوالہ کرنا بالکل مختلف بات ہے اور اس بات کا امکان نہیں ہے کہ داعش نقشبندی گروپ کے زیر سایہ رہنا پسند کرے گی۔ تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اس ٹوئٹر اکاﺅنٹ کے دعوﺅں کی تصدیق نہیں کی جا سکتی اور اس کی معلومات میں پراپیگنڈہ اور جانب داری بھی پائی جاتی ہے لیکن اس کے باوجود یہ داعش کی تاریخ اور مستقبل کے بارے میں معلومات کا اہم ترین ذریعہ ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -